اردوئے معلیٰ

قطرۂ ناچیز میں وہ بحرِ نا پیدا کنار

کس طرح لکھوں ثنائے خواجۂ عالی وقار

 

آمنہ بی کا جگر گوشہ، شہِ فرخ تبار

ذی حشم، ذی منزلت، ذی جاہ و گردوں اقتدار

 

گلشنِ ہستی تھا جانے کب سے محرومِ بہار

ان کے آتے ہی بہاریں آ گئیں مستانہ وار

 

سرگروہِ انبیا ہے وہ عرب کا تاجدار

اب نہیں کوئی نبی بعد اس کے تا روزِ شمار

 

بر رُخِ شاہِ دو عالم حسنِ دو عالم نثار

خلقِ اطہر مصحفِ قرآں کا ہے آئینہ دار

 

کامیاب و کامراں وہ بامراد و کامگار

آپ کے نقشِ قدم پر جو رہا سجدہ گزار

 

حلقۂ یاراں میں وہ تصویرِ عجز و انکسار

ہے وہی شیرِ ببر در عرصہ گاہِ کار زار

 

جاں نثارانِ نبی اللہ اکبر کیا کہیں

اک اشارے پر کریں قربان وہ جانیں ہزار

 

ہے سرِ فہرست جو ان سب میں مردِ خوش نصیب

ہے وہ ان کا جانشیں صدیقِ اکبرؓ یارِ غار

 

وحی ربانی سے ہے ماخوذ اس کا ہر کلام

ایک اک حرفِ سخن حکمت کا دُرِّ شاہوار

 

نسلِ آدم سے کیا پیدا محمد مصطفیٰ

دستِ طرفہ کارِ فطرت پر میں ہو جاؤں نثار

 

حاصلِ عمرِ رواں گر ہو نہ عشق مصطفیٰ

لا نہیں سکتا ہے نخلِ زندگی یہ برگ و بار

 

بندۂ محبوبِ رب اللہُ اکبر دیکھیے

عرشِ اعظم پر ہوا ہے ایک شب وہ جلوہ بار

 

مصرعِ ثانی ہے یہ کس مردِ حق آگاہ کا

‘با خدا دیوانہ باش و با محمد ہوشیار’

 

دیکھ آیا ہوں خوشا میں روضۂ پاکِ رسول

اب تہی دامانِ قسمت میں نہیں میرا شمار

 

پڑھ درود ان پر نظرؔ جتنا بھی ہو قبلِ غروب

آفتابِ عمر ڈھلکا از خطِ نصفُ النہار

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات