اردوئے معلیٰ

Search

قلم بہرِ مدحت اٹھانے لگے ہیں

مدینے سے الفاظ آنے لگے ہیں

 

کسی کو یہ بس چاند سورج لگے ہیں

ہمیں تو نبی کے دیوانے لگے ہیں

 

مدینے پہنچ کر بھلا دیں یہ باتیں

پہنچنے میں کتنے زمانے لگے ہیں

 

حضور آپ کا نام لب پہ سجا کر

مصائب کو ہم آزمانے لگے ہیں

 

یہ بس چاہتِ مصطفٰی کا اثر ہے

ہمیں دیکھو ، ہم چاہے جانے لگے ہیں

 

فرشتو رکو اتنی جلدی بھی کیا ہے

وہ میرے نبی ہیں نا ، آنے لگے ہیں

 

ترے آستانے کے دیوار و در بھی

ہمیں یاد بن کر ستانے لگے ہیں

 

اسیرانِ حسنِ مدینہ کو رضوان

آوازیں دے کر بلانے لگے ہیں

 

بھلا اس سے بڑھ کر کریمی بھی ہو گی

تبسم سے بھی طیبہ جانے لگے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ