اردوئے معلیٰ

Search

 

قلم کو ذوقِ نعت بھی ہے شوقِ احتیاط بھی

وَرَق وَرَق پہ لکھ رہا ہے خُلدکی صِراط بھی

 

دیارِ نُور میں ہیں دونوں کیفیات اوج پر

غمِ فراق بھی حضُوریوں کا اِنبساط بھی

 

بڑھا رہی ہے اُن کی یاد اِشتیاقِ دید کو

خیالِ شاہِ محترم ہے باعثِ نِشاط بھی

 

ہر ایک سوچ مُرتکز ہے کوئے مُشک بار پر

اسی سے میرا اُنس بھی ہے ربط و اِرتِباط بھی

 

بشر کو مل رہے ہیں سنگِ آستاں پہ مرتبے

وہیں پہ ہو رہا ہے قدسیوں سے اِختلاط بھی

 

کہیں نہ دامنِ رسُول چھوٹ جائے ہاتھ سے

حذر یہ راہِ مرگ ہے یہی ہے انحطاط بھی

 

میں لائقِ حضور ایک حرف کر سکوں رقم

مجال بھی نہیں یہاں مری نہیں بساط بھی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ