اردوئے معلیٰ

قیمتِ گُل برود چوں تو بہ گلزار آئی

قیمتِ گُل برود چوں تو بہ گلزار آئی

و آبِ شیریں چو تو در خندہ و گفتار آئی

 

پھولوں کی قدر و قیمت ختم ہو جاتی ہے

جب تو گلستان میں آتا ہے اور ٹھنڈے میٹھے

پانی کی بھی جب تو مسکراتا اور بات کرتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ