اردوئے معلیٰ

Search

لب پہ ثنا ہے اس شہِ عالم پناہ کی

کونین کی زباں پہ صدا واہ واہ کی

 

ٹھوکر سے بچ گئے ہیں ہر اک سنگِ راہ کی

بخشی انہوں نے شمع ہمیں لا الٰہ کی

 

جھکتا سلامیوں کو ہے اس بارگاہ کی

دیکھیں ہلال پہلی کو ہر ایک ماہ کی

 

تکیہ کیا ہے ہم نے شفاعت پہ شاہ کی

فردِ عمل سیاہ ہے اس روسیاہ کی

 

ایسی نہ آفتاب کی صورت نہ ماہ کی

صورت وہ دل نشیں ہے رسالت پناہ کی

 

گستاخی نگاہِ مسلسل کسے مجال

سب نے جمالِ رخ پہ اچٹتی نگاہ کی

 

جلوہ طراز جب سے ہوئے میمنت قدوم

قسمت کھلی زمینِ بے آب و گیاہ کی

 

دکھلا کے سیدھی راہ خدا سے ملا دیا

گم کردہ راہ ہم تھے خبر تھی نہ راہ کی

 

بندوں کو آپ ہی کی بدولت ہوئی خبر

بتلائی بات بات ثواب و گناہ کی

 

آقائے نامدار کی سطوت کے سامنے

گردن جھکی ہوئی ہے ہر اک کج کلاہ کی

 

امت کے حق میں رب سے دعائیں تمام شب

حد ہے نظرؔ کوئی کرمِ بے پناہ کی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ