اردوئے معلیٰ

 

لحد میں عشقِ رُخِ شہ کا داغ لے کے چلے

اندھیری رات سُنی تھی چراغ لے کے چلے

 

ترے غلاموں کا نقشِ قدم ہے راہِ خدا

وہ کیا بہک سکے جو یہ سراغ لے کے چلے

 

جنان بنے گی محبّانِ چار یار کی قبر

جو اپنے سینہ میں یہ چار باغ لے کے چلے

 

گئے ، زیارتِ در کی ، صدر آہ واپس آئے

نظر کے اشک پچھے دل کا داغ لے کے چلے

 

مدینہ جانِ جناں و جہاں ہے وہ سن لیں

جنہیں جنون جناں سوئے زاغ لے کے چلے

 

ترے سحاب سخن سے نہ نم کہ نم سے بھی کم

بلیغ بہر بلاغت بلاغ لے کے چلے

 

حضور طیبہ سے بھی کوئی کام بڑھ کر ہے

کہ جھوٹے حیلۂ مکر و فراغ لے کے چلے

 

تمہارے وصف جمال و کمال میں جبریل

محال ہے کہ مجال و مساغ لے کے چلے

 

گلہ نہیں ہے مُرید رشید شیطاں سے

کہ اس کے وسعت علمی کا لاغ لے کے چلے

 

ہر ایک اپنے بڑے کی بڑائی کرتا ہے

ہر ایک مغبچہ مغ کا ایاغ لے کے چلے

 

مگر خدا پہ جو دھبّہ دروغ کا تھوپا

یہ کس لعیں کی غلامی کا داغ لے کے چلے

 

وقوع کذب کے معنی دُرست اور قدوس

ہیے کی پھوٹے عجب سبز باغ لے کے چلے

 

جہاں میں کوئی بھی کافر سا کافر ایسا ہے

کہ اپنے رب پہ سفاہت کا داغ لے کے چلے

 

پڑی ہے اندھے کو عادت کہ شور بے ہی سے کھائے

بٹیر ہاتھ نہ آئی تو زاغ لے کے چلے

 

خبیث بہر خبیثہ خبیثہ بہر خبیث

کہ ساتھ جنس کو بازو و کلاغ لے کے چلے

 

جو دین کوؤں کو دے بیٹھے ان کو یکساں ہے

کلاغ لے کے چلے یا الاغ لے کے چلے

 

رضؔا کسی سگِ طیبہ کے پاؤں بھی چومے

تم اور آہ کہ اتنا دماغ لے کے چلے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات