اردوئے معلیٰ

لذت ملی ہے طیبہ میں آکر​

لذت ملی ہے طیبہ میں آکر​

حالت ہوئی اب تبدیل یکسر​

 

آئے ہیں شہرِ آقائے کوثر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

سب سے ہیں بڑھ کر ، ہر اک سے بہتر​

رب کے علاوہ وہ سب سے برتر​

 

مخلوق کوئی ان کی نہ ہمسر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

پیارے محمد رہتے یہاں تھے​

رنج و مصائب سہتے یہاں تھے​

 

حجرہ مبارک ، محراب و منبر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

مسجد وہ گنبد والی بھی دیکھی​

صفہ بھی دیکھا ، جالی بھی دیکھی​

 

پہنچی نظر جب جالی کے اندر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

پہلو میں ان کے شمس و قمر ہیں​

بوبکر ہیں اور حضرت عمر ہیں​

 

مدفون ہوں گے عیسیٰ یہیں پر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

کھلتے تھے سب در مسجد کے اندر​

ممنوع ہو گئے از حکمِ سرور​

 

کھلتا رہے گا صدیق کا در​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

وہ مقبرہ جس کا نام جنت​

دائی حلیمہ ، عثماں کی تربت​

 

ہیں اہلِ بیت اس میں جلوہ گستر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

صدیوں پرانے وہ اسطوانے​

ازواج کے وہ پیارے گھرانے​

 

سرسبز گنبد شاداب و اخضر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

وہ بابِ فہدی عبدالعزیزی​

وہ بیرِ عثماں ، وہ بیرِ علوی​

 

اعلان جبلِ سلیعہ کے اوپر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

جنت کا ٹکڑا ریاضِ جنت​

دوگانہ اس جا آقا کی سنت​

 

ہے عاشقوں کا اس جا سمندر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

طیبہ میں کتنے گھر ہیں جمالی​

جمعہ ، قبا اور دو قبلہ والی​

 

سب سے صحابہ نکلے ہیں پڑھ کر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

بیعت ہوئے تھے سارے مسلماں​

مسجد کے کونے پر وہ گلستاں​

 

بن گئے خلیفہ صدیقِ اکبر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

مجمع کی کثرت کا تانا بانا​

عشاقِ احمد کا آنا جانا​

 

آتے رہیں گے ہم بھی برابر​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

ہر ایک مادح اُن پر فدا ہے​

اُن کا ثنا خواں تو خود خدا ہے​

 

یہ سَرسَرؔی سی ہے نعتِ انور​

اللہ اکبر ، اللہ اکبر​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ