اردوئے معلیٰ

Search

لذّتِ عیش پہ تُف ، رونقِ بازار پہ خاک

ان کا سگ ڈالتا ہے درہم و دینار پہ خاک

 

شیر کی کھال میں ہر بھیڑیے عیار پہ خاک

آل و اصحابِ شہنشاہ سے بیزار پہ خاک

 

سیلِ گریہ سے بہا پایا نہیں کوہِ فراق

میرے محرومِ اثر دیدۂ خوں بار پہ خاک

 

عکسِ توصیفِ رخِ شہ نے اجالا ، ورنہ

’’ جم رہی تھی مِرے آئینۂِ اشعار پہ خاک ‘‘

 

گر نہ ہو جانِ معانی و مبانی کی ثنا

فنّ و اَفکار پہ تُف ، قوّتِ اظہار پہ خاک

 

خرمنِ حسنِ عمل جلنے سے کر لے ! محفوظ

واعظا ! ڈال ابھی آتشِ پندار پہ خاک

 

لِلّہ الحمد کہ جیتے جی مدینے میں ہے روح

بعدِ مردن بھی پہنچ جائے درِ یار پہ خاک

 

عکس افروز ہو گر اسوۂِ ذی خلقِ عظیم

نہیں ممکن کہ پڑے شیشۂِ کردار پہ خاک

 

مصدرِ اہلِ صفا اس کا ہے ذرّہ ذرّہ

مشتق از نور جو ہے رستۂِ سرکار پہ خاک

 

لوح مکشوف ہو ، اے صاحبِ چشمِ ” ما زاغ ” !

تیرے دربار کی پڑ جائے جو اَبصار پہ خاک

 

پھر وہ کونین میں کیونکر نہ معظمؔ ہو ، اگر

ڈال دے نعلِ مقدس کسی بدکار پہ خاک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ