اردوئے معلیٰ

Search

لطف و کرم حضور اگر آپ کا نہ ہو

انسانیت سے کوئی بشر آشنا نہ ہو

 

اِک بار تیرے لطف کی ہو جائے ابتداء

واللّٰہ پھر تو اس کی کبھی انتہا نہ ہو

 

ممکن نہیں کہ سوچ میں رفعت ہو اور پھر

بے ساختہ قلم نے محمد لکھا نہ ہو

 

تیرا وہم حجاب ہے تیرا ، وگرنہ سن !

ممکن نہیں انہوں نے صدا کو سنا نہ ہو

 

مِثْقَالَ ذَرَّۃ کے معانی یہی تو ہیں

محبوب دیکھ لے کہ کوئی رہ گیا نہ ہو

 

محشر کی تلخیاں اسے بے شک ڈرائیں گی

عشقِ رسول کا جسے تڑکا لگا نہ ہو

 

مشکل میں ایک بار پکارا ہو گر انہیں

دکھلاؤ وہ گرا کہ جو گر کر اٹھا نہ ہو

 

جو ہے ، وہ مصطفٰی کی نظر میں ہے بے شبہ

وہ ہے نہیں ، جو اِن کو دکھایا گیا نہ ہو

 

رخ پہ ترے نگاہ کے پڑنے کی دیر ہے

ممکن نہیں کہ دل ترے آگے جھکا نہ ہو

 

گردِ تبسم اُن کا ہے پہرہ لگا ہوا

اُن کا اگر نہ ہوں تو مرے ساتھ کیا نہ ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ