اردوئے معلیٰ

لوح بھی توُ قلم بھی توُ تیرا وجود الکتاب

لوح بھی توُ قلم بھی توُ تیرا وجود الکتاب

گنبدِ آبگینہ رنگ تیرے محیط میں حباب

 

عالمِ آب و خاک میں تیرے ظہور سے فروغ

ذرّۂ ریگ کو دیا توُ نے طلوعِ آفتاب

 

شوکتِ سنجر و سلیم تیرے جلال کی نمود

فقرِ جنید و بایزید تیرا جمالِ بے نقاب

 

شوق تیرا اگر نہ ہو میری نماز کا امام

میرا قیام بھی حجاب میرا سجود بھی حجاب

 

تیری نگاہِ ناز سے دونوں مراد پا گئے!

عقلِ غیاب و جستجو عشقِ حضور و اضطراب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ