لوگ کیا کیا گفتگو کے درمیاں کھلنے لگے

لوگ کیا کیا گفتگو کے درمیاں کھلنے لگے

ذکر یاراں چل پڑا تو راز داں کھلنے لگے

 

پھر پڑاؤ ڈل گئے یادوں کے شامِ ہجر میں

اور فصیلِ شہرِ جاں پر کارواں کھلنے لگے

 

تنگ شہروں میں کھلے ساگر کی باتیں کیا چلیں

بادِ ہجرت چل پڑی اور بادباں کھلنے لگے

 

جب سے دل کا آئنہ شفاف رکھنا آ گیا

میری آنکھوں پر کئی عکسِ نہاں کھلنے لگے

 

دل کی شریانوں میں تازہ غم اک ایسے جم گیا

سب پرانے زخم ہائے بے نشاں کھلنے لگے

 

تیرے غم کا مہر بستہ گوشوارہ کیا کھلا

عمر بھر کے دفتر سود و زیاں کھلنے لگے

 

مدتوں سے ہم نشیں تھے ہم نشاط وہم طرب

مبتلائے غم ہوا تو مہرباں کھلنے لگے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ