اردوئے معلیٰ

متاعِ جان ، تجھی سے بگاڑ بیٹھے ہیں

جنوں میں شہرِ محبت اُجاڑ بیٹھے ہیں

 

بتا فنونِ حرب کی نئی کوئی تکنیک

مرے حریف مری لے کے آڑ بیٹھے ہیں

 

یقین ہے کہ سلامت ہے درد کی چادر

گمان ہے کہ گریبان پھاڑ بیٹھے ہیں

 

عذابِ ترکِ تمنا میں صرف دامن کیا

ترے فقیر ترا عشق جھاڑ بیٹھے ہیں

 

کہیں گے تازہ غزل تجھ پہ دیکھنا اک دن

قلم کی نوک اگر دل میں گاڑ بیٹھے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات