اردو معلی copy
(ہمارا نصب العین ، ادب اثاثہ کا تحفظ)

مجھے بکھرے بکھرے سے بال یوں بھی پسند ہیں

مجھے بکھرے بکھرے سے بال یوں بھی پسند ہیں

مجھے ماتمی سے لباس میں نہ ملا کرو

 

مجھے بے وقوف سمجھ رہا ہے مری طرح

مری بے دھیانی سے فائدہ جو اُٹھا لیا

 

کسی اُس جہان میں مل کے تجھ سے میں کیا کروں

مرے منتشر سے جہان میں مجھے مل کبھی

 

مرے خوش گماں تری چاہتوں کے نثار پر

مجھے برملا سی محبتوں پہ یقیں نہیں

 

مرے زخم ہیں انہیں اپنی ذات سے جوڑ مت

مرے چارہ گر مری حسرتوں سے گریز کر

 

تری حیرتیں مری چلتی سانس کو دیکھ کر

مرے حوصلے کا طلسم ہے جو اٹوٹ ہے

 

میں قیام گاہ بنا رہا ترے واسطے

تو یہ کیا ہوا مجھے کیوں بکھیر کے رکھ دیا؟

 

اسے شاعری کا ادب یہ کس نے سکھا دیا

مری بات بات پہ داد دیتا ہے طنز سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

تو اداس کر یا اداس رہ، مرے پاس رہ
آپ نے ہاتھ کیا چھڑایا ہے
بے خبری کا موسم ہے
کیا مرے دکھ کی دوا لکھو گے
لفظوں میں مت کھویا کر
اگر سزا ہے مقدر تو کیا جزا کی طلب!
بے بسی کے شہر میں ہم زندگی سے تنگ ہیں
یہی دعا ہے رہیں سبز ہی ترے موسم
اُس نے اتنا تو کرلیا ہوتا
جسم سے روح کا جدا ہونا