اردو معلی copy
(ہمارا نصب العین ، ادب اثاثہ کا تحفظ)

مجھے بھی لائے گا شوقِ سفر ’’مواجہ‘‘ پر

 

مجھے بھی لائے گا شوقِ سفر ’’مواجہ‘‘ پر

شبِ فراق کی ہو گی سحر ’’مواجہ‘‘ پر

 

زباں سے عرضِ تمنا نہ کر سکا لیکن

کھڑا تھا ہاتھ، مگر باندھ کر ’’مواجہ‘‘ پر

 

ازل سے محوِ سفر ہے ہمارا ذوقِ نظر

تمام ہو گا ہمارا سفر ’’مواجہ‘‘ پر

 

اُنہیؐ کے جود و عطا کا جہاں میں شہرہ ہے

یہیؐ لٹاتے ہیں لعل و گہر ’’مواجہ‘‘ پر

 

طبیبو ! جاؤ تمہارے یہ بس کا روگ نہیں

ملیں گے مجھ کو مرے چارہ گر ’’مواجہ‘‘ پر

 

نہ دیکھ پایا ’’مواجہ شریف‘‘ جی بھر کے

جھُکی جھُکی سی پڑی ہے نظر ’’مواجہ‘‘ پر

 

غموں کی دھوپ سے مل جائے گی نجات مجھے

نصیب میں ہے اگر دوپہر ’’مواجہ‘‘ پر

 

مرادیں مانگ لو دونوں جہاں کی مولا سے

چلے ہی آئے ہو اشفاقؔ گر ’’مواجہ‘‘ پر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

حلقے میں رسولوں کے وہ ماہِ مدنی ہے
مرحبا سید مکی مدنی العربی (جان قدسی)
کوئی گفتگو ہو لب پر، تیرا نام آ گیا ہے
سیرِ چمن میں ، بیٹھ لب جُو، دُرُود پڑھ
اے شۂ انس وجاں،زینتِ این وآں ، بزمِ ہستی کی ہے دل کشی آپؐ سے
بے خبر مخبرِ صادق کی خبر رکھتے ہیں
جاری مِری زبان پہ ذکرِ رسول ہے
مرے آقا زمینیں اور زمانے آپ کے ہیں
نئی نعت لکھوں نیا سال ہے​
ماحول سرورِ اسم کا ہے