اردوئے معلیٰ

Search

مجھے بھی یاد ہے وہ دن کہ جب میں شاداں تھا

فضائے طیبہ میں کچھ ساعتوں کا مہماں تھا

 

خوشا کہ میں بھی مدینے کی خُلد میں پہنچا

جہاں پہنچنے کا مدت سے دل کو ارماں تھا

 

خوشا کہ گنبدِ خضرا کی ضو نگاہ میں ہے

ابھی تلک تو مرا خواب ہی درخشاں تھا

 

سلام کرتا تھا آنکھوں سے اُن فضاؤں کو

کہ جن فضاؤں میں آقا کا نور ارزاں تھا

 

قریبِ گنبدِ خضرا بھی دل رہا لرزاں

مُوَاجَہَہ سے جدائی کا غم، نمایاں تھا

 

شکستہ دل تھا ندامت کے چند آنسو تھے

درِ نبی پہ مرے پاس بس یہ ساماں تھا

 

نڈھال میرے گناہوں نے کر دیا تھا مجھے

فضائے نور میں اِک خوف دل میں پنہاں تھا

 

اشارہ پاکے میں جآؤکَ سے وہیں پہنچا

مرے گناہوں کا آقا کے پاس درماں تھا

 

نگاہِ لطف کی درخواست اعتراف کے ساتھ

اُنہی سے کی، کہ وہیں مغفرت کا ساماں تھا

 

درِ نبی پہ پہنچ کر سکوں ملے تو کہوں

حضور ! آج تلک میں بہت پریشاں تھا

 

وہ لمحہ آج میسر ہوا ہے قسمت سے

جو اب سے پہلے مرے قرب سے گریزاں تھا

 

دیا ہے اذنِ حضوری تو اب حضور ! مجھے

یہیں قیام میسر ہو جس کا ارماں تھا

 

زمینِ طیبہ میں جب دفن ہو عزیزؔ احسن

کُھلے، کہ روزِ الست ایک یہ بھی پیماں تھا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ