مجھ کو بھی ملے اذنِ سفر سیدِ سادات

مجھ کو بھی ملے اذنِ سفر سیدِ سادات

ہے پیشِ نظر آپ کا در سیدِ سادات

 

مرجان نہ یاقوت، نہ الماس و جواہر

درکار ہے بس ایک نظر سیدِ سادات

 

روشن اسے کر دیجئے جلوؤں سے بسا کر

ویران ہے سنسان ہے گھر سیدِ سادات

 

یہ حاضر و ناظر کے عقیدے نے سکھایا

رکھتے ہیں غلاموں کی خبر سیدِ سادات

 

للہ مجھے اپنے ہی قدموں میں سلا لیں

اے میرِ امم خیر بشر سیدِ سادات

 

آصفؔ بھی ہے ادنیٰ سے تمنائیِ دیدار

طالب ہیں اگر شمس و قمر سیدِ سادات

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ