اردوئے معلیٰ

Search

مجھ کو حصارِ حلقۂ احباب چھوڑ کر

صحرا ملا ہے گلشن شاداب چھوڑ کر

 

ملتی نہیں کہیں بھی سوائے خیال کے

اٹھے ہیں ایسی صحبتِ نایاب چھوڑ کر

 

سب کچھ بہا کے لے گئی اک موجِ اشتعال

دریا اتر گیا ہمیں غرقاب چھوڑ کر

 

اوج فلک سے گر گیا تحت الثریٰ میں عشق

طوفِ حریمِ ناز کے آداب چھوڑ کر

 

مسجد کی پاسبانی پر اب آ گئی ہے بات

اٹھنا پڑے گا منبر و محراب چھوڑ کر

 

ہر چشم زیرِ خواب ہے یا زیرِ بارِ اشک

دیکھوں کسے میں دیدۂ مہتاب چھوڑ کر

 

نکلے رہو گے دوزخ لیل و نہار میں

کب تک ظہیرؔ جنتِ بیتاب چھوڑ کر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ