محبت کیجیے ربّ العلیٰ سے

محبت کیجیے ربّ العلیٰ سے

محبت کیجے محبوبِ خُداؐ سے

 

عطا کرتے ہیں آپؐ اپنی محبت

اگر مانگے کوئی صدق و صفا سے

 

خُدا کی نعمتیں ملتی ہیں ساری

درِ خیر البشرؐ خیر الوریٰؐ سے

 

خُدائے پاک نے اُنؐ کو نوازا

مُروّت، حِلم سے، جُود و سخا سے

 

شبِ معراج، معراجِ محبت

بظاہر ابتدا، غارِ حرا سے

 

کٹا لیتے ہیں سر اُمت کی خاطر

ملا یہ درس، دشتِ کربلا سے

 

ظفرؔ! ہے لازم و ملزوم باہم

خُدا کا پیار، عشقِ مصطفیؐ سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سنا ہے شب میں فرشتے اُتر کے دیکھتے ہیں
ایسا تجھے خالق نے طرح دار بنایا
رحمت نہ کس طرح ہو گنہگار کی طرف
حضورِ کعبہ حاضر ہیں حرم کی خاک پر سر ہے
در پہ آئے ہیں اِلتجا کے لیے
اُنؐ کی رحمت کا کچھ شمار نہیں
درِ سرکارؐ پر گریاں ہے کوئی آبدیدہ ہے
السّلام اے سیّد و سردارِ ما
آپ ہیں مصطفےٰ خاتم الانبیاء
وَالفَجر ترا چہرہ، والیل ترے گیسو

اشتہارات