اردوئے معلیٰ

محمد مصطفیٰ محبوبِ داور، سرورِ عالم​

محمد مصطفیٰ محبوبِ داور، سرورِ عالم​

وہ جس کے دم سے مسجودِ ملائک بن گیا آدم​

 

کیا ساجد کو شیدا جس نے مسجودِ حقیقی پر​

جھکایا عبد کو درگاہِ معبودِ حقیقی پر​

 

دلائے حق پرستوں کو حقوقِ زندگی جس نے​

کیا باطل کو غرقِ موجۂ شرمندگی جس نے​

 

غلاموں کو سریرِ سلطنت پر جس نے بٹھلایا​

یتیموں کے سروں‌ پر کردیا اقبال کا سایا​

 

گداؤں کو شہنشاہی کے قابل کردیا جس نے​

غرورِ نسل کا افسون باطل کردیا جس نے​

 

وہ جس نے تخت اوندھے کر دئیے شاہانِ جابر کے​

بڑھائے مرتبے دنیا میں ہر انسانِ صابر کے​

 

دلایا جس نے حق انسان کو عالی تباری کا​

شکستہ کردیا ٹھوکر سے بت سرمایہ داری کا​

 

محمد مصطفیٰ مہرِ سپہرِ اَوجِ عرفانی​

ملی جس کے سبب تاریک ذرّوں‌ کو درخشانی​

 

وہ جس کا ذکر ہوتا ہے زمینوں آسمانوں‌ میں‌​

فرشتوں کی دعاؤں‌ میں، مؤذن کی اذانوں میں‌​

 

وہ جس کے معجزے نے نظمِ ہستی کو سنوارا ہے​

جو بے یاروں‌ کا یارا، بے سہاروں‌ کا سہارا ہے​

 

وہ نورِ لَم یزل جو باعث تخلیقِ عالم ہے​

خدا کے بعد جس کا اسمِ اعظم، اسمِ اعظم ہے​

 

ثنا خواں جس کا قرآں ہے، ثنا میں جس کی قرآں میں​

اسی پر میرا ایماں ہے، وہی ہے میرا ایماں میں​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ