مدینہ جائے قرا رِجاں ہے مدینہ مسکن ہے راحتوں کا

 

مدینہ جائے قرارِ جاں ہے مدینہ مسکن ہے راحتوں کا

مدینہ ابرِ کرم کا محور, مدینہ مرکز ہے رحمتوں کا

 

حبیبِ ربِ کریم ہو تم، بڑے رؤف و رحیم ہو تم

میں آؤں در پر حضور والا میں منتظر ہوں اجازتوں کا

 

مجھے ثناء گر بنایا تو نے ہنر ثناء کا سکھایا تو نے

کرم ہے آقا یہ تیرا مجھ پر عطا کیا ذوق مدحتوں کا

 

قریب کا ہے کہ دُور کا ہے رہینِ احساں حضور کا ہے

شمار کرنا نہیں ہے ممکن حضور تیری عنایتوں کا

 

مجھے ہے اولاد سے محبت، مجھے ہے ماں باپ سے عقیدت

مگر مقدم ہے ذات تیری توئی ہے محور محبتوں کا

 

کرم کے ابرِ مطیر ہیں وہ، سخاوتوں میں شہیر ہیں وہ

وہ بے طلب دے رہے ہیں مجھکو پتا ہے میری ضرورتوں کا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ