مدینہ منبعِ خوشبو ہے شہرِ شاہِ خوباں ہے

 

مدینہ منبعِ خوشبو ہے شہرِ شاہِ خوباں ہے

وہاں کا ذرہ ذرہ لعل ہے ،گوہرہے ، مرجاں ہے

 

جھما جھم بارشِ رحمت ہوا کرتی ہے طیبہ میں

کہ خود جبریل اس رحمت کدہ کا نوری درباں ہے

 

نچھاور جان و دل اس گنبدِ خضریٰ کی رونق پر

مکیں جس کا انیسِ بے کساں محبوبِ یزداں ہے

 

مرے آقا کرم کی اک نظر قلبِ تپیدہ پر

حوادث کی تمازت سے مسلسل دل پریشاں ہے

 

کھلا کرتے ہیں دل میں داغ ہر شب ہجرِ طیبہ کے

مرے اس درد کا اذنِ مدینہ ہی تو درماں ہے

 

مری چشمِ تصور میں سجی ہے نعت کی محفل

نبی ہیں رونقِ محفل، نقیبِ بزم، حسّاں ہے

 

کرم پر منحصر ہے حاضری دربارِ عالی کی

وگرنہ منظرِؔ عاصی گناہوں پر پشیماں ہے

 

یہ ہی پہلا سبق ماں باپ نے تجھ کو دیا منظرؔ

محمد ہی مطافِ دو جہاں ہے کعبۂ جاں ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ