اردوئے معلیٰ

Search

 

مدینہ کی بہاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

اسی کے لالہ زاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

 

وہ جن سے عازمینِ طیبہ روز وشب گزرتے ہیں

مجھے ان رہگذاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

 

جو مجھ کو سرورِ کونین کی باتیں سناتے ہیں

مجھے ان میرے پیاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

 

جہاں نامِ نبی پر جان دینے والے سوتے ہیں

مجھے ایسے مزاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

 

وہ مکّہ ہو مدینہ ہو کہ شہرِ قدُس کی گلیاں

عقیدت کے دیاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

 

جو صحراؤں سے اٹھ کر وادی رحمت کو جاتے ہیں

اُن اونٹوں کی قطاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

 

منیر! اکثر میں تنہائی میں نعتیں گنگناتا ہوں

کہ مجھ کو ان سہاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ