مدینےکا سفر ہے اور میں نم دیدہ نم دیدہ

مدینے کا سفر ہے اور میں نم دیدہ نم دیدہ

جبیں افسردہ افسردہ ، قدم لغزیدہ لغزیدہ

 

چلا ہوں ایک مجرم کی طرح میں جانبِ طیبہ

نظر شرمندہ شرمندہ بدن لرزیدہ لرزیدہ

 

کسی کے ہاتھ نے مجھ کو سہارا دے دیا ورنہ

کہاں میں اور کہاں یہ راستے پیچیدہ پیچیدہ

 

غلامانِ محمّدﷺ دور سے پہچانے جاتے ہیں

دل گرویدہ گرویدہ، سرِ شوریدہ شوریدہ

 

کہاں میں اور کہاں اُس روضۂ اقدس کا نظارہ

نظر اُس سمت اٹھتی ہے مگر دُزدیدہ دُزدیدہ

 

بصارت کھو گئی لیکن بصیرت تو سلامت ہے

مدینہ ہم نے دیکھا ہے مگر نادیدہ نادیدہ

 

وہی اقبال جس کو ناز تھا کل خوش مزاجی پر

فراق طیبہ میں رہتا ہے اب رنجیدہ رنجیدہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

بزمِ ہستی کے روحِ رواں آپ ہیں
خزاں سے کوئی طلب نہیں ہے بہار لےکر میں کیا کروں گا
اے کاش! ہم بھی ہوں درِ انور کے سامنے
جہاں میں مرتبہ جس نے بهی چاہا
جب گلشن حیات میں سرکار آ گیے
بابِ مدحت پہ مری ایسے پذیرائی ہو
شیرازہ بندِ دفترِ امکاں ہے شانِ حق
بارگۂ جمال میں خواب و خیال منفعل
ردائے شوق میں مدحت کے تار بن، مرے دل
رحمت کے موسموں کے پیمبر حضورؐ ہیں