اردوئے معلیٰ

 

مرا کیف نغمۂ دل، مرا ذوق شاعرانہ​

ترے حسن کا ترنم، ترے عشق کا ترانہ​

 

ترے حسن کی عطا ہے، ترے عشق کا صلہ ہے​

مری آہ صبحگاہی، مرا نالۂ شبانہ​

 

تری یاد دے اجازت تو بتاؤں میں کہ ہے کیوں​

مرا ہر نفس حقیقت، مرا ہر نفس فسانہ​

 

تری یاد کی خلش ہو، ترے ذکر کی تپش ہو​

مرے اشکہائے غم کو کوئی چاہیے بہانہ​

 

ترا ذکر روح پرور ہے زبانِ عارفیؔ پر​

بہ تو اے محرمانہ، بحدیثِ دیگرانہ​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات