اردوئے معلیٰ

Search

مرا یہ ذہن بھی فکرِ رسا بھی تیری ہے

اور اس کی روشنی پُر ضیا بھی تیری ہے

 

ہیں بے شمار ستارے سجے ہوئے اس میں

یہ آسمان کی نیلی رِدا بھی تیری ہے

 

بھٹک رہا تھا اندھیروں میں آدمی ، یارب

ترے نبی نے جو بخشی ضیاء بھی تیری ہے

 

ترے حبیب پہ بھیجیں درود کے تحفے

یہ حکم بھی ہے ترا اور رضا بھی تیری ہے

 

یہ پھول کلیاں یہ بھنورے یہ گلستاں تیرے

یہ دھوپ چھاؤں پہ مہکی فضا بھی تیری ہے

 

یتیموں اور غریبوں کی تُو ہی سنتا ہے

جو ان کے لب پہ ہے یارب دعا بھی تیری ہے

 

سوا ہے تیری محبت ہر ایک بندے سے

کتاب بھی ہے تری اور صدا بھی تیری ہے

 

جو لا علاج مریض اس جہاں میں ہیں ان کو

ہے تیرا نام ہی کافی دوا بھی تیری ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ