مرثیۂ نَو تصنیف (ننانوے بند)

ربِ سُخن ! نواز عطائے کثیر سے

مُجھ کو بہم ھو فَیض ھر اُستاد و پِیر سے

غالب سے طمطراق ملے، سوز مِیر سے

رمزِ غمِ حُسَین انِیس و دبِیر سے

 

خُورشیدِ حرفِ حق مرے لب سے طلُوع ھو

مُجھ سے سخن کا سلسلۂ نَو شرُوع ھو

 

تاثیر مرحمت ھو بفیضِ شہِ زمَن

فوجِ سُخنوراں کا ھو سالار میرا فن

مُجھ کو ھو اِذنِ جائزۂ لشکرِ سُخن

میدان میں جب آؤں تو کانپے سُخن کا رن

 

قرطاسِ غم عطا ھو، فروزاں قلم ملے

مولا سے مُجھ کو فوجِ سُخن کا علَم ملے

 

مُجھ کو ھو یاد بابِ فصاحت کا ھر سبَق

زیر و زبَر سمیت ھو ازبر ورَق ورَق

ھو سہلِ مُمتنع جو کہُوں مصرعۂ ادَق

تاحدِ معنی پُھولے مرے لفظ کی شفق

 

تمثیل برمَحَل ھو، کنایہ درست ھو

تشبیہہ بھی کمال ھو بندش بھی چُست ھو

 

ھر حرف آہ بن کے دلوں پر اثر کرے

ھر لفظ سامعین کے ذھنوں میں گھر کرے

ھر شعر جسم و جاں کی تہوں تک سفر کرے

ھر بند جس کسی پہ کُھلے، آنکھ تر کرے

 

لوحِ سخن پہ میرا نشاں تااَبد رھے
یہ مرثیہ رثائی ادب میں سند رھے

 

بعد از دُعا نظر جو اُٹھی ھے تو سامنے

بھر دی ھے بزم ماتَمِیانِ امام نے

چھیڑا ھے ذکرِ غم جو علی کے غُلام نے

قُدسی فلک سے اُترے ھیں اشکوں کو تھامنے

 

اس بزم میں ثواب بھی ھے اور سرُور بھی

مجلس بھی ھے، یہ چشمۂ آبِ طہُور بھی

 

مولا ! یہ حاضرین ھیں دیوانے آپ کے

مستِ غمِ حُسَین ھیں مستانے آپ کے

روئیں گے شان سے جو مِلیں شانے آپ کے

پروا کسی کی کیوں کریں پروانے آپ کے

 

ھوش و حواس و جان و جگر کھونے آئے ھیں

مولا ! سنبھال لینا کہ ھم رونے آئے ھیں

 

رونا غمِ حُسین میں ھے باعثِ ثواب

ھر چشمِ نم ھے اصل میں خُلدِ بریں کا باب

بزمِ عزا ھے محفلِ مہتاب و آفتاب

ھم خاکیوں پہ خاص ھے انعامِ بُو تُراب

 

مولائیو ! بلند ھے فریادِ کربلا

سنبھلو ! شروع ھوتی ھے اب یادِ کربلا

 

وہ شام تھی کہ وقت کی ویراں ڈگر کی دُھول

لمحے تھے یا کہ رُوح میں چُبھتے ھوئے ببُول

کُملا رھے تھے غم سے ریاضِ نبی کے پُھول

دُکھ سے تھی زرد سُرخئ کاشانۂ بتُول

 

غُل تھا کہ اب حُسَین مدینے سے جائیں گے

یعنی مدینے والے تو جینے سے جائیں گے

 

پھر رھروانِ کرب و بلا نے قدم بڑھائے

قبرِ نبی کو ‘اللہ نگہبان’ کہنے آئے

قسمت کسی کو رنج نہ اس طَور کے دکھائے

نانا سے الوداعی مُلاقات، ھائے ھائے

 

پہنچا حضُورِ شاہ تو شہزادہ رو پڑا

قبرِ نبی سے لگ کے نبی زادہ رو پڑا

 

رو رو کے عرض کی کہ مرے اچھے مُصطفٰے

میں آپ ھی کی گود میں کھیلا، پلا، بڑھا

اب آگیا ھے وقتِ سفر، وا مُصیبتا

اپنے حُسَین، اپنے نواسے کو دیں دُعا

 

مت روئیے، جناب پہ قُربان جاؤں مَیں

نانا ! خدائے پاک نگہبان ۔۔ جاؤں مَیں ؟

 

آئی صدا کہ میرے دُلارے ! مرے حُسَین

سُنتی ھے میری رُوح مِری فاطمہ کے بَین

اَے میری جاں سے لاڈلی بیٹی کے نُورِ عیَن

تُم جاؤ گے تو ساتھ ھی جائے گا میرا چَین

 

لیکن یہی ھے میرے خُدا کی رضا، سو جاؤ

آواز دے رھی ھے تُمہیں کربلا سو جاؤ

 

زینب یہ بولیں ماں کی لحَد سے بہ چشمِ نم

امّاں ! تُمہارے شہر سے اب جارھے ھیں ھم

ھم جیسے کسمَپُرس کہیں ھیں نہ اھلِ غم

ربِ کریم آلِ نبی پر کرے کرم

 

صیدِ خزاں بہارِ بنی فاطمہ نہ ھو

یارب ! نبی کے دیں کا کبھی خاتمہ نہ ھو

 

لُٹ پُٹ نہ جائیں تیرے پیَمبر کے بعد ھم

بے آسرا نہ ھوں کہیں حیدر کے بعد ھم

در در نہ بھٹکیں رحلتِ مادر کے بعد ھم

شبّیر کے غلام ھیں شبّر کے بعد ھم

 

یہ کہتے کہتے آنکھ سے آنسُو نکل پڑے

اتنے میں شور اُٹھا کہ رھوار چل پڑے

 

رُخصت ھوا جو شہرِ نبی سے علی کا لال

صدمے سے رُوحِ بنتِ نبی ھوگئی نڈھال

اشکوں میں تر تھے اھلِ مدینہ کے خدّوخال

ھر دل اسیرِ درد تھا، ھر آنکھ پُرملال

 

نانا کے گھر سے نکلا جو بیٹا بتُول کا

آہ و بُکا سے گونج اُٹھا روضہ رسُول کا

 

یثرب کو چھوڑ کر سُوئے مکّہ چلے امام

یہ عزم تھا کہ حج سے کریں دل کو شادکام

لیکن جب آئے کُوفہ سے کُچھ نامہ و پیام

نکلے برائے اُمَتِ احمد شہِ انام

 

راز اُن کو کھولنا تھا الف لام میم کا

مولا کے سر پہ قرض تھا ذبحِ عظیم کا

 

ویران دشت، راھیں پُراسرار و ھَولناک

اُڑتے نہ تھے طیُور مگر اُڑ رھی تھی خاک

ھر دل ھوا کے زھرِ ھلاھِل سے تھا ھلاک

صحرائے سینہ زور کا سینہ ھُوا تھا چاک

 

مُردہ تھے پُھول، گُلشنِ ھستی تباہ تھا

ایسی اذیّتیں تھیں کہ سبزہ سیاہ تھا

 

دُبکے ھُوئے تھے اپنے پروں میں پرندگاں

سہمے ھوئے تھے بَن میں بچارے چرندگاں

بُھولے تھے سب شکار کے حِیلے درندگاں

وہ دشت اور حُسَین کے ماتم کُنندگاں

 

معصُوم لوگ اور وہ دن رات، ھائے ھائے

آلِ نبی پہ وہ کڑی آفات، ھائے ھائے

 

پھر بھی رواں تھا قافلۂ عزم رات دِن

سالارِ کارواں تھے شہنشاہِ انس و جِن

تھا امتحان صبر کا اور عشق مُمتحِن

سب اپنے رب سے راضی تھے، رب سب سے مُطمئِن

 

شکوے گِلے کی ان میں رِوایت کوئی نہ تھی

دُکھ درد تو بہت تھے، شکایت کوئی نہ تھی

 

کافی طویل ھوگئی جب رھگذارِ سخت

اُترا پھر اک مقام پہ سب قافل کا رخت

بنجر زمین، رُوکھی فضا، بے ثمَر درخت

کچھ ایسی وحشتیں تھیں کہ ھر دل تھا لخت لخت

 

سایہ اگر کوئی تھا تو آسیبِ غم کا تھا

ایک آدھ رنگ جو تھا سو شامِ الم کا تھا

 

حیراں ھُوئے یہ دیکھ کے اصحابِ جانثار

مولا سے عرض کی کہ شہنشاہِ نام دار

بچّے بِلَک اُٹھے ھیں، بدکتے ھیں راھوار

یہ کونسی جگہ ھے کہ ھم سب ھیں بے قرار ؟

 

فرمایا شاہ نے ابھی سمجھائے دیتے ھیں

ھم اصل ماجرا تُمہیں بتلائے دیتے ھیں

 

یہ قتل گاہِ عشق ھے، میدانِ ظُلم و جبر

یعنی ھے ذبح خانۂ اھلِ رضا و صبر

مقتل نبی کی آل کا، انصار کی ھے قبر

چھایا رھے گا اس پہ سدا آنسوؤں کا ابر

 

مشہد ھے یہ حُسَین کا، سب جان لو اسے

یہ کربلا ھے، غَور سے پہچان لو اِسے

 

تقدیر نے چُنا ھے یہی قطعۂ زمیں

ذبِح عظیم ھوگا ادا، صاحبو ! یہیں

مولا کے جانثار ھیں مولا کے جانشیں

کٹ جائے اب گَلا بھی تو کوئی گِلہ نہیں

 

رھوار کھول دو، یہیں خیمے بپا کرو

نزدیک ھیں وداع کی گھڑیاں، دُعا کرو

 

صادر کیا جو حُکم شہیدوں کے شاہ نے

ڈالا وھیں پڑاؤ حُسینی سپاہ نے

گرمایا سب کے دل کو شہادت کی چاہ نے

مقتُول خُوں کو بھانپ لیا قتل گاہ نے

 

خیمے لگے تو شامِ گلُوگیر رو پڑی

ان بے کسوں کو دیکھ کے تقدیر رو پڑی

 

دشتِ بلا میں گُذرے اذیّت کے روز و شب

تشنہ لبی سے زرد تھے مولائیوں کے لب

گرچہ کہیں نہیں تھا سکوں کا کوئی سبب

تھے شاکرِ مُسبّب الاسباب سب کے سب

 

ھرچند مُضمحل تھی فضا ھست و بُود کی

خیموں میں روز و شب تھیں صدائیں درُود کی

 

تاریخ جب نویں تھی محرّم کی، وقتِ شام

دُشمن کے تیر آکے گرے جانبِ خیام

چشمِ حُسین پا تو گئی جنگ کا پیام

لیکن ابھی جناب کا باقی تھا ایک کام

 

سو شہ نے ظالموں سے فقط رب کی بات کی

بہرِ سجُود مُہلتِ یک شب کی بات کی

 

پھر سارے جانثاروں کو یکجا کیا طلب

مُشکل زیادہ روزِ قیامت سے تھی وہ شب

جب جمع ھوگئے سبھی احبابِ خوش نسب

واضح کیا حُسین نے بُلوانے کا سبب

 

کہنے لگے کہ امن کی لَو بُجھ بُجھا گئی

پردیسیوں پہ ساعتِ خُونریز آ گئی

 

کل صُبح جنگ ھوگی سو ناحق بہے گا خُوں

ان ظالموں کو بس ھے مرے قتل کا جنُوں

سو کیوں نہ دل کی بات مَیں اب برملا کہُوں

بیعت کے عہد نامے سے تُم کو رھا کرُوں

 

تُم سے خُدا اور اُسکا نبی شاد ھوگئے

بیعت سے آج تُم سبھی آزاد ھوگئے

 

تُم میں سے جس کو جانا ھے، جھجکے نہیں ذرا

میرا نہ غم کرو کہ ھے حافظ مرا خُدا

یہ کہہ کے تھوڑا چُپ سے ھوئے شاہِ کربلا

اور پھر چراغِ خیمہ کو یکدم بُجھا دیا

 

سوچا کہ یُونہی ضائع کوئی زندگی نہ ھو

اور چھوڑ جانے والوں کو شرمندگی نہ ھو

 

یہ سُن کے رو پڑے سبھی احبابِ ذی وقار

اک اک نے عرض کی کہ شہنشاہِ نامدار

ھم خاکِ پائے آلِ نبی کے ھیں خاکسار

سو بار بھی ملے تو یہ جاں آپ پر نثار

 

کس طرح اپنے عشق کو ھم ایسے چھوڑ دیں ؟

آقا کو ھم غُلام بھلا کیسے چھوڑ دیں ؟

 

یہ سُن کے آسمان کو تکنے لگے امام

آنکھوں میں اشک، لب پہ نبی و علی کا نام

حسرت سے دیکھا سُوئے رفیقانِ تشنہ کام

بہرِ نمازِ شُکر کیا پھر وھیں قیام

 

شب بھر عبادتیں تھیں، خشُوع و خضُوع تھا

آنکھیں کُھلیں تو یومِ شہادت طلُوع تھا

 

وہ صُبح کی ھوائے مُعطّر، وہ مُشک و عُود

اُجلے اُفق سے نُورِ جہاں تاب کی نمُود

پاکیزگی سے پُر وہ چمن زارِ ھَست و بُود

وہ حمد، وہ سلام، وہ تسبیح، وہ درُود

 

شجر و حجَر ثنائے الٰہی میں محو تھے

دونوں جہاں خُدا کی گواھی میں محو تھے

 

پھر اِذن لے کے اکبرِ مہ رُو نے دی اذاں

ھم شکلِ مُصطفےٰ تھا وہ شہزادۂ جہاں

پاکیزہ و مُعطّر و پُرعزم نوجواں

رنگِ صدا میں صوتِ نبوّت کی لالیاں

 

آواز سُن کے جُھوم اُٹھے بُلبُلوں کے دل

سوزِ گلُو سے کِھلنے لگے سب گُلوں کے دل

 

تکبیرِ اکبری میں تھے اسرارِ کائنات

رخُصت کی گُونج، غم کی صدا، حوصلے کی بات

بے چارگئ پنجتن و رازِ شش جہات

بالا بلند دعوتِ قد قامَتُ الصلات

 

ویرانۂ زمان و زمیں دنگ رہ گیا

جس نے اذاں سُنی سو وھیں دنگ رہ گیا

 

بیٹے کے لب سے سُن کے اذاں رو پڑے حُسین

روحِ علی سے بولے کہ اے شاہِ مشرقین

بُجھ جائے گا براہِ خُدا میرا نُورِ عَین

ھائے میرا مؤذنِ غم، میرے دل کا چَین

 

ؑپیوندِ خاک زیرِ زمیں ھوگا، یا علی

ؑاکبر بوقتِ عصر نہیں ھوگا، یا علی

 

اکبر پہ رازِ اللہُ اکبر ھے آشکار

امداد اس کی کیجیو مُشکل میں بار بار

مولائی بھی ھے آپ کا، مولائے کردگار

پوتا بھی ھے، غلام بھی سو آپ پر نثار

 

گرتے میں تھام لیجو مرے نورِعین کو

مولا ! نہ رونے دیجیو اپنے حُسین کو

 

یہ کہہ کے اشکبار کھڑے ھوگئے امام

صف بستہ مُقتدی تھے زمیں آسماں تمام

قرآت میں جُونہی آیا رسُولِ خُدا کا نام

زار و قطار روئے مُحمد کے سب غُلام

 

کیا اشک تھے نماز میں، کیا التجائیں تھیں

عرشِ خُدا بھی ھِل گیا، ایسی دُعائیں تھیں

 

بعد از نمازِ فجر اُٹھے شاہِ کائنات

مولا کے ارد گرد تھے اصحابِ خُوش صفات

وہ روشنی تھی جو مہ و انجم کو دے دے مات

شان و شکوہ دیکھ کے ششدر تھے شش جہات

 

مجذُوب ان کے جذب کا سارا جہان تھا

اک غُلغُلہ زمین سے تا آسمان تھا

 

جنّت سے جھانک کر ھُوئی حیراں ھر ایک حُور

ایک ایک کے لبوں پہ تھا تحسین کا وفُور

کہتی تھیں اللہ اللہ یہ نیرنگیاں یہ نُور

مولائیوں کے رُخ کی چمک ھے کہ برقِ طُور

 

بے مثل ھے جمال شہِ مشرقین کا

ھے چودھویں کا چاند کہ چہرہ حُسَین کا ؟

 

قامت کہ جس پہ قامتِ سرو و سمَن فدا

خُوشبوئے تن پہ خُوبئ مُشکِ خُتن فدا

پیکر پہ دو جہان کے سب خُوش بدن فدا

شیریں لبوں پہ ھیں سبھی شیریں سُخن فدا

 

بولَیں تو کائنات کو نغمے سُنائی دیں

چُپ ھوں تو فرش و عرش بھی گُم سُم دکھائی دیں

 

گُلہائے سُرخ ھیں، لبِ مُعجز بیاں نہیں

معراجِ نُطقِ صدق و صفا ھے، زباں نہیں

وہ آن ھے کہ اور کہیں بھی عیاں نہیں

وہ ھے یقیں کہ ذرّہ برابر گُماں نہیں

 

خاکی تو خیر آپ سا پیدا نہیں ھُوا

نُور ایسا عرش سے بھی ھویدا نہیں ھُوا

 

حے حُرمت و حُریّت و حقّانیت کا نام

سین ایسی جس کو سُورۂ یاسیں کرے سلام

یے یا نبی کا نعرہ ھے، یے یاعلی اِمام

اور نُون نُور و نکہت و نیرنگ کا نظام

 

شانِ خُدا ھے اسمِ جگر گوشۂ بتُول

جسمِ نبی ھے جسمِ جگر گوشۂ بتُول

 

عباسِ باوفا کی انوکھی ھے چَھیل چھب

روشن نگاہ، خندہ جبیں اور شکر لب

شیریں کلام، عالی سُخن، ھاشمی نسب

جن کے غُلام انجم و مہتاب سب کے سب

 

ھے عزم ان کا نام، وفا ان کانام ھے

عباس ابنِ شیرِ خُدا ان کا نام ھے

 

کوئی نہیں ھے اکبر و اصغر سا ماہ رُو

یہ صُورتِ نبی ھے، وہ مہتاب ھُو بہُو

شہزادگاں کے لب پہ ھے تسبیحِ اللہ ھُو

کرتی ھے بےکسی یہی اعلان کُو بہ بکُو

 

تیر ان سے دُور ھی رھیں کُوفہ و شام کے

بچّے ھیں یہ حُسین علیہہ السلام کے

 

حُسن و جمالِ عَون و مُحمد ھے باکمال

اک ماہِ بے مثال ھے، اک بدرِ لازوال

یہ حال دیکھ پائے تو یُوسف بھی کھیلے حال

جُھومیں زنانِ مصر، زُلیخا بھی ھو نہال

 

ان کا اگر ھو ذکر جوانانِ خُلد میں

مچ جائے کھلبلی دلِ حُورانِ خُلد میں

 

پھر پیش آیا دشت میں حُر کا معاملہ

جس کا ضمیر کشمکشِ خیر و شر میں تھا

مولا نے اک نظر میں کری بے بہا عطا

دکھلادیا دلوں کو بدلنے کا مُعجزہ

 

چشمِ حُسَین میں کوئی بات ایسے گُر کی تھی

تبدیل اک نگاہ میں تقدیر حُر کی تھی

 

عاشُور کا وہ شُعلوں بھرا دن، وہ شور و شر

چُھپتی تھی لُو سے دیدۂ نمناک میں نظر

گرمی تھی وہ کہ جلنے لگے آگ کا جگر

دوزخ بھی ڈر کے رکھے نہ تلوے زمین پر

 

مُشکل تھی وہ کہ موت بھی آساں دکھائی دے

وہ حشر تھا کہ نارِ جہنّم دُھائی دے

 

آنکھیں پگھل رھی تھیں، سسکتا تھا سانس سانس

سُورج سے فاصلہ تھا فقط ایک آدھ بانس

اٹکی تھی ھر گلے میں غضب تشنگی کی پھانس

ھر ذی نفس کا حال دگرگُوں تھا کھانس کھانس

 

گالوں پہ آنسُوؤں سے رقم لفظِ درد تھا

چہروں کا رنگ پیاس کی شدت سے زرد تھا

 

مَولا کے لشکری تو تھے بالکل گِنے چُنے

پہنے تھے سب لباس غمِ عشق کے بُنے

نعرے لبوں پہ وہ تھے کہ جو سُن لے، سر دُھنے

اور ایسے جانثار کہ ان دیکھے، ان سُنے

 

تاریخ کے سِتَم کا انوکھا جواب تھے

گنتی میں کم تھے، عشق میں وہ بےحساب تھے

 

اس لشکرِ قلیل پہ ھوں دوجہاں نثار

چالیس پاپیادہ تھے، بتّیس تھے سوار

دوشِ زُھیرقَین پہ تھا میمنہ کا بار

تھا میسرہ حبیب مظاھر کا اختیار

 

پیغامِ آس ھر دلِ پُریاس کو ملا

یعنی عَلَم حُسَین کا عبّاس کو ملا

 

دُشمن کے اسلَحے کے عجب رنگ ڈھنگ تھے

نیزے تھے، نِیمچے تھے، زِرھیں تھیں، خُدَنگ تھے

بھالے، کٹاریں، برچھیاں، تیر و تفَنگ تھے

بدمست وحشی مائلِ پَیکار و جَنگ تھے

 

بدصَوت جانور کی طرح دھاڑتے ھُوئے

پِھرتے تھے دیو چار سُو چِنگھاڑتے ھُوئے

 

نحس و پلید و شُوم و گنہگار و خرمِثال

بدخُو و کینہ پرور و بدکار و بدخصال

ازبر تھا اِن کو دھوکہ دھی کا تمام حال

گُر، داؤ پیچ، پینترے، مکر و دغا کی چال

 

بیہُودہ بھی تھے، نیچ بھی تھے، بے حیا بھی تھے

شاطر تو تھے ھی، ماھرِ کذب و ریا بھی تھے

 

مولائیوں کی جُرات وھمت تھی مُستقل

تھے اُن کے آگے رستُم و سُہراب بھی خجِل

دُشمن کو دیکھ دیکھ کے ھوتے تھے مُشتعِل

دب جاتے گیدڑوں سے بھلا کیسے شیر دِل

 

ان میں جلال سارے کا سارا علی کا تھا

ایک ایک کی زبان پہ نعرہ علی کا تھا

 

کہتے تھے شان و شوکتِ سادات کی قسم

مولا ! ھم آج آپ کے پیروں میں دیں گے دم

بڑھ کر ھٹیں جو پاؤں تو کردینا سر قلم

لاریب، آج مر کے ھمیشہ جئیں گے ھم

 

بے خوف ھیں، نڈر ھیں، جری ھیں، دلیر ھیں

ھم مُرتضٰی کی آل ھیں، شیروں کے شیر ھیں

 

یہ ذکر تھا کہ بجنے لگا طبلِ جنگ اُدھر

فوجِ خُدا میں ھوگئیں صف بندیاں اِدھر

کچھ تیر جُونہی آگرے پائےحُسین پر

مولائیوں کا جیشِ بُہادر گیا بپھر

 

دل کے سبُو سے صبر کے شُعلے چھلک پڑے

یُوں بھر کے غَیض آیا کہ آنسُو ٹپک پڑے

 

غُصے سے لال ھوگئے مردانِ جنگجُو

آنکھوں نے اشکِ غَیض و غضب سے کیا وضُو

خواھش یہ تھی کہ جلد ھوں فوجوں سے دُو بدُو

اپنے لہُو میں ڈُوب کے ھوں رن میں سُرخ رُو

 

سبطِ نبی سے عشق کا حق اس طرح نبھائیں

مولا پہ تیر آئے تو اپنے بدن پہ کھائیں

 

پھر جنگِ چھڑ گئی سرِ میدان کارزار

ایک ایک کرکے شاہ پہ پیارے ھوئے نثار

لاشے اُٹھا کے لائے حُسینِ فلک وقار

آنکھوں میں اشک، شانوں پہ کوہِ الم کا بار

 

پہلے پہَل تو عَون و مُحمد فدا ھوئے

ھنگامِ عصر قاسم و اکبر جُدا ھُوئے

 

مولا کے پاس رہ گئے عباسِ نامور

غم سے تھی ایک ایک پلک آنسوؤں میں تر

جب رو چُکے حُسَین کے ھاتھوں کو چُوم کر

لپکے یزیدیوں کی طرف مثلِ شیرِ نر

 

رن گوُنج اُٹھا نعرۂ پروردگار سے

اُٹھنے لگی صدائیں یمین و یسار سے

 

یہ کون مرد آیا کہ لرزاں ھے کائنات ؟

کس کے جلال سے تہہ و بالا ھوئی حیات ؟

سہمے ھیں کس کے خوف سے سارے جری صفات ؟

لب ھائے فرش و عرش پہ ھے زلزلے کی بات

 

ھر سمت دھاڑتا ھُوا یہ کون شیر ھے ؟

کس کا پسَر یہ مردِ شجاع و دلیر ھے ؟

 

کس ضرب سے زمان و مکاں میں ھے تھرتھری ؟

کس نے مچائی ھے دلِ یزداں میں کھلبلی ؟

طاری ھے کس کے خوف سے تاروں پہ کپکپی ؟

لیتے ھیں کس کے ڈر سے مہ و مَہر جُھرجُھری ؟

 

ھاتف نے دی صدا کہ بڑا خاص نام ھے

غازی لقب ھے شیر کا، عبّاس نام ھے

 

آئے علَم اُٹھائے علمدارِ صف شکن

دکھلادیا لڑائی میں شیرِ خُدا کا فن

رن میں لگا جو نعرۂ اسمائے پنجتن

کانپے مثالِ بَید سواروں کے تن بدن

 

اللہ رے کربلا میں لڑائی دلیر کی

دو لاکھ گیدڑوں میں تھی دھاڑ ایک شیر کی

 

غازی کی تیغ جس پہ چلی، سربسر کٹا

بچ کر اِدھر سے نکلا تو جا کر اُدھر کٹا

کٹ کر کوئی گرا تو کوئی چیخ کر کٹا

مُشکل سے ھاتھ پاؤں بچائے تو سر کٹا

 

غُل تھا کہ اپنی جان بچا کر نکل چلو

اُٹّھے تو مارے جاؤ گے، پنجوں کے بل چلو

 

پہنچے لبِ فُرات جو عبّاسِ خوش خصال

گرجے کہ آؤ روک لو، ھے کوئی ماں کا لال ؟

دیکھو ھمی تو ھیں پسَرِ شیرِ ذُوالجلال

مُنہ پھیرتے نہیں ھیں کبھی ھم دمِ جدال

 

دیکھو جو فتح کرنا تھی گھاٹی وہ کر بھی لی

لو گھاٹ پر پہنچ بھی گئے، مشک بھر بھی لی

 

یہ کہہ کے جب ترائی سے نکلا وہ ذی حشَم

ساری سپاہِ شام اُمڈ آئی ایک دم

کیسے چلاتا تیغ غلامِ شہِ اُمم

اک ھاتھ میں تھی مشک تو اک ھاتھ میںں علَم

 

پھر یُوں ھُوا کہ ایک ھزاروں میں گھر گیا

مولا کا بھائی کتنے سواروں میں گھر گیا

 

سینے پہ تیغ کھائی، سہے بازوؤں پہ تیر

تھا وردِ یاحفیظ کبھی وردِ یاقدیر

جب مل کے مارنے لگے نیزے سبھی شریر

گھوڑے پہ جُھک گیا پسَرِ شاہِ قلعہ گیر

 

خیموں میں واں حُسین بصد یاس گر پڑے

یاں قتل ھو کے حضرتِ عباس گر پڑے

 

خیمے سے نکلی ننّھی سکینہ بچشمِ تر

رو رو کے بولی میرے چچاجان ھیں کدھر ؟

بابا ! اُنہیں بچا کے اُٹھا لائیے ادھر

بازو تو کٹ گئے ھیں، کہیں کٹ نہ جائے سر

 

پیاسی نہیں مَیں، پانی نہیں چاھئیے مُجھے

اپنے چچا کا رُوئے حسیں چاھئیے مُجھے

 

ڈیوڑھی پہ بے قرار پھرے حضرتِ امام

جُز صبر و شُکر لب پہ نہ آیا کوئی کلام

جنگل میں رُوحِ عصر تھی ساکت بوقتِ شام

یک لخت اک کراہ سے ھلنے لگے خیام

 

چھد جائے جیسے سینہ کسی تیز سیخ سے

دل کٹ گیا حسَین کا اصغر کی چیخ سے

 

چھ ماہ کا وہ بے بس و معصُوم شیرخوار

روتا بلکتا بے کس و مظلُوم شیرخوار

سائے سے دُور، پانی سے محرُوم شیرخوار

وہ بے زبان و کم سِن و مغمُوم شیرخوار

 

آواز پر تھیں تشنہ دھانی کی بیڑیاں

پیاسا تڑپ تڑپ کے رگڑتا تھا ایڑیاں

 

جب دل کو چیرنے لگی معصُوم کی کراہ

بانہوں میں لے چلے پسَرِ تشنہ لب کو شاہ

دُھندلا رھی تھی اشکِ بلاخیز سے نگاہ

کچھ دُور خیمہ زن تھی سِتَم آشنا سپاہ

 

سوچا کہ لُو لگے نہ کہیں گُلعذار کو

مل جائے تھوڑا پانی مِرے شیرخوار کو

 

اصغر کو ساتھ لے تو گئے سرورِ زماں

لیکن سوال آ نہ سکا برسرِ زباں

چُومِیں بلکتے بچّے کے ھونٹوں کی پپڑیاں

پھر بولے فوجِ بد سے کہ اَے جَیشِ گُمرَھاں

 

ھم تشنہ لب ضرُور ھیں، بے آسرا نہیں

خود بولو اھلِ بیتِ مُحمّد ھیں یا نہیں ؟؟

 

ھم حُکم دیں تو چشمۂ کوثر اُبل پڑے

ابرُو ھلیں تو سلسلۂ ابر چل پڑے

ھلکا سا گر ھماری جبینوں پہ بل پڑے

اپنے کنارے توڑ کے دریا نکل پڑے

 

تُم کیا سمجھ رھے ھو کہ مُحتاجِ آب ھیں ؟

ھم خاندانِ ساقئ روزِ حساب ھیں

 

گر ھم کہَیں تو آبِ بقا لائیں جبرئیل

صحرا کے دِل سے پُھوٹ بہے دُودھ کی سبیل

پھر بھی یہ ضبط ھے تو ھے سچّائی کی دلیل

ایسے ھُوئے ھیں راضی کہ جیسے ھُوئے خلیل

 

سہہ لیں گے بُھوکے پیاسے ھم انجامِ کربلا

لیکن یہ بچّہ اور یہ آلام کربلا ؟؟؟

 

ھم تُم میں ٹَھن گئی ھے تو اس کا نہیں قصُور

چھ ماہ اس کی عُمر ھے، اے فُوجِ پُرفُتور

معصُوم انکھڑیوں سے بُجھا جا رھا ھے نُور

مُنّے سے حلق میں ھے فقط پیاس کا وفُور

 

چھوٹا سا ھے سو تشنہ لبی سہہ نہ پائے گا

یہ بے زباں زبان سے کچھ کہہ نہ پائے گا

 

دیتا ھے اپنی جاں، مرے بیٹے کو روک لو

پیاسا ھی چل پڑا، ارے پیاسے کو روک لو

اس بھولے بھالے بُجھتے ستارے کو روک لو

اے ظالمو ! سُنو، مرے بچّے کو روک لو

 

جُز اشک پاس کچھ نہیں ننّھی سی جان کے

کانٹے دکھا نہ پائے گا سُوکھی زبان کے

 

یہ کہہ کے چُپ ھُوئے جو شہِ آسماں سریر

چلّے میں خُوب کھینچ کے مارا کسی نے تیر

یک لخت چِھد گیا گلُوئے اصغرِ صغیر

ھونٹوں سے خُون اُبلا، نہ پانی ملا نہ شِیر

 

پیاسا تھا تین دن کا، وھیں تھک کے سو گیا

بیٹا پِدَر کی گود میں ھی ذبح ھوگیا

 

ٹُوٹا عجیب ظُلم و ستَم شیرخوار پر

لگتے ھی تیر ھوگیا کُرتا لہُو میں تر

چھوٹے سے ھاتھ پاؤں میں جاں تو نہ تھی مگر

آنکھوں کی پُتلیوں میں تھی حسرت بھری نظر

 

باقی نہ ایک سانس بھی ننّھے بدن میں تھ

باچھیں تھیں خُشک اور انگوٹھا دھن میں تھا

 

لختِ جگر کا لاشہ اُٹھا کر چلے حُسَین

صدمے سے جاں بلب تھے شہنشاہِ مشرقَین

خیموں میں پہنچے لے کے جُونہی جسمِ نُور عَین

جنگل میں گُونج اُٹّھے بنی فاطمہ کے بَین

 

بانو تو ماں تھیں، صدمے سے غش کھا کے گِر پڑیں

زینب وفورِ درد سے تھرّا کے گر پڑیں

 

کھودی وھیں امام نے چھوٹی سی ایک قبر

صد حَیف اھلِ بَیت پہ تاریخ کا یہ جبر

دفنادیا تو رونے لگے آس پاس ابر

لی جُھرجُھری زمیں نے تو شہ بولے: صبر صبر

 

پیاسا ھی سوگیا ھے، سو لوری سُنائے جا

تاحشر میرے لال کو جُھولا جُھلائے جا

 

بانو کو ھوش آیا تو بولیں بحالِ زار

ننّھی سی جان قبر میں ھے، ھائے ماں نثار

اصغر تو شب میں نیند سے اُٹھتا ھے باربار

خود کو اکیلا پا کے بہت ھوگا بےقرار

 

کروٹ بھی لے نہ پائے گا، سو بھی نہ پائے گا

ماں صدقے، میرا بچہ تو رو بھی نہ پائے گا

 

بانو کے بَین سُن کےاُٹھے شاہِ کائنات

صدمے سے چہرہ زرد تھا اور تھے کمر پہ ھات

کہنے لگے کہ لاؤ نبی کے تبرّکات

حُجّت تمام کرنی ھے اُمّت سے کرکے بات

 

خیمے میں اھلِ بَیت کی آھیں سما گئیں

زینب تبرّکاتِ نبی لے کے آگئیں

 

مولا نے جُونہی پہنی وہ پوشاکِ یادگار

اھلِ حرم کی چیخیں گئیں آسماں کے پار

نظریں اُٹھا کے شہ نے اُنہیں دیکھا ایک بار

خیمے سے پھر نکل گئے مولائے نام دار

 

ھر آنکھ چیخنے لگی، ھر دل دھل گیا

ایسے لگا کہ گھر سے جنازہ نکل گیا

 

پہنچے قریبِ لشکرِ بد حضرتِ امام

بعد از ادائے حمد و ثنا یُوں کیا کلام

حق کی تمیز جان لو، اے فوجِ رُوم و شام

ناحق تُلے ھو ظُلم پہ، پچھتاؤ گے مُدام

 

پہچانو، پسرِ فاتحِ بدر و حُنَین ھُوں

مَیں ھی نبی کی گود کا پالا حُسَین ھُوں

 

میری خطا ھے کیا ؟ مری تقصیر تو بتاؤ

تُم پر چلائی ھے کبھی شمشیر تو بتاؤ

اُلفت میں مَیں نے کی کبھی تاخیر تو بتاؤ

ظالم ھے گر حُسینِ گلوگیر تو بتاؤ

 

ھم سب پہ بے شُمار ھیں احساں رسُول کے

کیوں گُل مسل رھے ھو ریاضِ بتول کے ؟

 

دیکھو جو میرے جسم پہ زیبا ھے یہ لباس

اس میں ابھی تلک ھے نبی کے بدن کی باس

حرص و ھوَس کی راہ میں تم سب ھو بدحواس

دیکھو ذرا سا غور سے کیا کیا ھے میرے پاس

 

شمشیر یہ علی کی، یہ جامہ نبی کا ھے

رُومال فاطمہ کا، عمامہ نبی کا ھے

 

نانا نہیں ھیں کیا مرے سرکارِ کائنات ؟

کیا میرے ھات میں نہیں شیرِ خُدا کا ھات ؟

مادر نہیں ھیں کیا مری زھرائے خوش صفات ؟

پہنچی نہیں ھے کانوں تلک کیا نبی کی بات ؟

 

ھر ایک نے سُنا ھے شہِ مشرقین سے

‘لوگو ! حُسین مجھ سے ھے اور مَیں حُسین سے’

 

کیا ھے کسی چراغ میں خُورشید جیسا نُور ؟

چیُونٹی میں کب ھے رفعتِ کُہسار کا ظہُور ؟

قطرہ بھلا کرے گا سمندر سے کیا غرُور ؟

ذرّے میں کیسے آئے گا طُوفان کا وفُور ؟

 

کیسے کرے گا پاک اطاعت پلید کی ؟

مُجھ جیسا کر نہ پائے گا بیعت یزید کی

 

یہ بات کرکے سبطِ نبی ھوگئے خموش

جیش یزید کو نہ تھا بدمستیوں میں ھوش

جونہی ھوئے لڑائی پہ مائل وہ دیں فروش

مولا کے دل کو آگیا یکدم جلال و جوش

 

جُونہی لگائی ایڑ، رواں ذُوالجناح تھا

خُوں ظالموں کا اُس کے سُموں پر مُباح تھا

 

لپکا، بڑھا، ھِلا ، نہ رُکا، بے خطر اُڑا

تڑپا، کدھر گیا ؟ اِدھر آیا، اُدھر اُڑا

دوڑا، مُڑا، چلا، دِل و جاں کھول کر اُڑا

یکبار اُڑ کے سنبھلا تو بارِ دگر اُڑا

 

وہ برق تھی کہ سارا جہاں گُھومنے لگا

بُرّاق ذُوالجناح کے سُم چُومنے لگا

 

گھوڑے کی جست و خیز پہ حیراں تھا فرد فرد

رفتار دیکھ کر تھے سبھی رَخش و اَسپ زرد

ھوتا تھا اُس کی ٹاپ سے دھرتی کے دل میں درد

اُس کے سُموں سے اُڑتی تھی گردُوں کے گِرد گَرد

 

قابُو میں اس لیے تھا کہ راکب امام تھے

سب شہسوار ورنہ یہاں آکے خام تھے

 

پھر تو وہ غُلغُلہ تھا کہ اللّہ کی پناہ

محوِ وغا تھا رن میں دوعالم کا بادشاہ

تیغِ حُسَین سے بھلا بچتی کہاں سپاہ

خود موت کو نہیں ملی کوئی پناہ گاہ

 

تھی فیضِ ذُوالجلال جلالت امیر کی

طاقت تھی بازوؤں میں شہہِ قلعہ گیر کی

 

تیغِ حُسین کھا کے سبھی بے ادب گرے

دو چار پندرہ بیس نہیں، سب کے سب گرے

گر کر ذرا سا اُٹھے تو اُٹھ کر غضب گرے

لاشے پکار اُٹھے سرِ خاک جب گرے

 

بس ھاتھ روک لیجیے، اکبر کا واسطہ

تھم جائیے، جناب کو اصغر کا واسطہ

 

بیٹوں کے نام سُن کے رُکے شاہِ پُر وقار

دل پر چُھری چلی تو جگر پر چلی کٹار

یاد آئے جونہی شاہ کو بچے وہ یادگار

تیغِ ملال ھوگئی سینے کے آر پار

 

آھوں کی اُڑتی گرد سے دل بیٹھنے لگا

آنکھیں بھر آئیں، درد سے دل بیٹھنے لگا

 

موقع یہ پا کے بھاگی ھوئی فوج لوٹ آئی

سبطِ نبی نے صبر سے گردن وھیں جُھکائی

ماتھے پہ تیر گڑ گیا، سینے پہ تیغ کھائی

دشتِ بلا میں لُٹ گئی زھرا کی سب کمائی

 

وا حسرتا ! بجھایا علی کے چراغ کو

اُمت نے لُوٹ ڈالا محمد کے باغ کو

 

ھنگامِ عصر سبطِ نبی کٹ کے رہ گیا

مولا کا چھلنی سینہ بہت زخم سہہ گیا

آبِ فُرات سے بھی سوا خُون بہہ گیا

لیکن زبانِ حال سے لاشہ یہ کہہ گیا

 

کیوں ظالموں نے مُجھ کو نہ جانا، مرے نبی

اُمّت سے پوچھیے، مرے نانا ! مرے نبی

 

کثرت کے زعم و جوش میں ڈوبا تھا جَیشِ بد

دو لاکھ اُدھر سپاہ، اِدھر جان اک عدد

جب ظالموں نے ایک نہتّے پہ ڈالی زد

روحِ بتُول چیخ اُٹھی یاعلی مدد

 

آفات میں گھرے ھُوئے پیاسے کی خیر ھو

مولا ! مرے نبی کے نواسے کی خیر ھو

 

لختِ دلِ رسُول کا جب سر قلم ھُوا

خُود دیدۂ خُدائے مُحمد بھی نم ھُوا

کعبے میں اک دراڑ پڑی، عرش خم ھُوا

لوحِ جہاں پہ نوحۂ کربل رقم ھُوا

 

درھم ھُوا نظام حیات و ممات کا

یک لخت سانس رُکنے لگا کائنات کا

 

کانپی زمین اور پگھلنے لگا فلک

پہنچی صدائے ماتمِ فرش اوجِ عرش تک

ظُلمت میں ڈھل گئی مہ و خُورشید کی چمک

رو روکے گُھل گئی شبِ غم کی پلک پلک

 

تیرِ ستم سے سینۂ کونَین شق ھُوا

سبطِ پیمبرِ عَرَبی جاں بحق ھُوا

 

جنگل میں گُونجے زینبِ بے آسرا کے بَین

بابا ! سنبھال لیجے مُجھے، مر گئے حُسَین

اُمّت نے مُجھ سے چھین لیا میرے دل کا چَین

گُل ھوگیا ھے فاطمہ زھرا کا نُورِ عَین

 

سر تن سے کٹ گیا ھے، دُھائی ھے، یاعلی

یہ فاطمہ کے گھر کی کمائی ھے، یا علی

 

کیسی یہ شام وقت نے دکھلائی، ھائے ھائے

ھم بے کسوں پہ کیسی گھڑی آئی، ھائے ھائے

امّاں کے گھر کو مَیں نہ بچا پائی، ھائے ھائے

کیسے ھُوا ھے ذبح مِرا بھائی، ھائے ھائے

 

ماتم کروں ؟ خموش رھُوں ؟ یا بُکا کرُوں ؟

مولا ! مَیں اب یتیم سکینہ کا کیا کروں ؟

 

بس اب قلم کو تھام لے، اے فارسِ حزیں

اشکوں میں اَور بہنے کی طاقت رھی نہیں

اس بزمِ غم میں جتنے بھی پیارے ھیں جاگزیں

سب ھیں علی و فاطمہ زھرا کے عاشقیں

 

مولائیوں کی حاضرئ غم قبُول ھو

حامی سبھی کا اللہ اور اُس کا رسُول ھو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

عید پھیکی لگ رھی ھے، عشق کی تاثیر بھیج
عشق سچا ھے تو کیوں ڈرتے جھجکتے جاویں
تمام خُون خرابہ خُدا کے نام پہ ھے 
شہرِ بےرنگ میں کب تُجھ سا نرالا کوئی ھے
کہیں جو خوبیٔ قسمت سے مجھ کو مِل جاتیں
شہرِ بے رنگ میں کب تجھ سا نرالا کوئی ہے
اب بھی ہے یاد مجھ کو پہلی لگن کا جادُو
شہزادہ علی اصغرؑ
کچھ ایسے لمحۂ موجود میں پیوست ہے ماضی
یہ جو مجھ پر نکھار ہے سائیں

اشتہارات