اردوئے معلیٰ

مرے قریۂ شبِ تار میں کوئی بھیج لمحۂ روشنی

ترے دستِ جود و کرم میں ہے مرے حرفِ شوق کی دلبری

 

مَیں تری گلی کے جوار میں یونہی رُک گیا ہُوں دمِ وداع

اسے حکم دے مرے مقتضا، میں چلوں تو ساتھ چلے گلی

 

سبھی قافلے ہیں رواں دواں سوئے کوئے مہبطِ قُدسیاں

ہیں اُمیدِ اذن پہ سر بہ خم مرے خواب اور مری بے بسی

 

تری بارگاہِ جمال میں کروں نذرِ شوق تو کیا کروں

مری عرض ہے لبِ بستہ دم، مری نعت ہے مری خامشی

 

ترے آستاں سے ہیں منسلک مری نسبتیں، مری حیرتیں

مری تازگی، مری نغمگی، مری بندگی، مری زندگی

 

یہ تو بس مدارِ سخن میں ہیں،انہیں تابِ حرف کہاں بھلا

مرے نطق و خامۂ شوق کو کوئی دے سلیقۂ چاکری

 

یہ گرفتہ دل، یہ شکستہ پا، یہ حروفِ عجز کا ملتجی

ترے پاس لایا ہے لغزشیں، تُو نواز نعت کی نوکری

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات