اردوئے معلیٰ

مرے محبوب، محبوبِ زماں ہیں

وہ محبوبِ خدا ہیں، بے گماں ہیں

 

حبیبِ کبریا، عظمت نشاں ہیں

وہ ربّ العالمیں کے ترجماں ہیں

 

اُنھی کے دم سے تابندہ جہاں ہیں

درخشندہ سبھی کون و مکاں ہیں

 

وہی چارہ گرِ بے چارگاں ہیں

مسیحائے ہمہ خستہ دِلاں ہیں

 

وہی جو دلربائے عاشقاں ہیں

وہی حاجت روائے بے کساں ہیں

 

وہی جو رہنمائے گمرہاں ہیں

سبھی اُن کے گدائے آستاں ہیں

 

وہی جو خیر خواہِ دُشمناں ہیں

ظفرؔ! احباب پر بھی مہرباں ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات