اردوئے معلیٰ

Search

مطلعِ نورِ الٰہی ہے نہارِ عارض

مصدرِ ہشت جناں فیضِ بہارِ عارض

 

اے سیہ کارو ! تمہیں طلعتِ بخشش کی نوید !

لِلہ الحمد کہ ہے زلف کنار عارض

 

جیسے تفسیرِ "جلالین ” ہو گردِ مصحف

ایسے ہی خط ہے یمین اور یسارِ عارض

 

تیغِ تنویر سے کر دوں گا ابھی تجھ کو ہلاک

میں ہوں اے ظلمتِ غم ! عاشقِ زارِ عارض

 

شعلۂِ جرم نہ کیوں گلشنِ حسنات بنے ؟

’’نارِ دوزخ کو چمن کردے بہارِ عارض ‘‘

 

فن مہکتا ہے ، کہ ہے واصفِ زلفِ مشکیں

حرف روشن ہیں ، کہ ہیں مدح نگارِ عارض

 

چاہِ یوسف ذَقَنِ سیدِ عالم کی جھلک

نورِ کل ، حسنِ جہاں آئنہ دارِ عارض

 

حسنِ صورت کی نہیں اس میں معظمؔ تخصیص

قاسمِ جملہ محاسن ہے وقارِ عارض

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ