معطیِ مطلب تمہارا ہر اِشارہ ہو گیا

 

معطیِ مطلب تمہارا ہر اِشارہ ہو گیا

جب اِشارہ ہو گیا مطلب ہمارا ہو گیا

 

ڈوبتوں کا یا نبی کہتے ہی بیڑا پار تھا

غم کنارے ہو گئے پیدا کنارا ہو گیا

 

تیری طلعت سے زمیں کے ذرّے مہ پارے بنے

تیری ہیبت سے فلک کا مہ دو پارا ہو گیا

 

اللہ اللہ محو حُسنِ روئے جاناں کے نصیب

بند کر لیں جس گھڑی آنکھیں نظارا ہو گیا

 

یوں تو سب پیدا ہوئے ہیں آپ ہی کے واسطے

قسمت اُس کی ہے جسے کہہ دو ہمارا ہو گیا

 

تیرگی باطل کی چھائی تھی جہاں تاریک تھا

اُٹھ گیا پردہ ترا حق آشکارا ہو گیا

 

کیوں نہ دم دیں مرنے والے مرگِ عشقِ پاک پر

جان دی اور زندگانی کا سہارا ہو گیا

 

نام تیرا، ذکر تیرا، تو، ترا پیارا خیال

ناتوانوں بے سہاروں کا سہارا ہو گیا

 

ذرّۂ کوئے حبیب‘ اللہ رے تیرے نصیب

پاؤں پڑ کر عرش کی آنکھوں کا تارا ہو گیا

 

تیرے صانع سے کوئی پوچھے ترا حُسن و جمال

خود بنایا اور بنا کر خود ہی پیارا ہو گیا

 

ہم کمینوں کا اُنھیں آرام تھا اِتنا پسند

غم خوشی سے دُکھ تہِ دل سے گوارا ہو گیا

 

کیوں نہ ہو تم مالکِ مُلکِ خدا مِلک خدا

سب تمہارا ہے خدا ہی جب تمہارا ہو گیا

 

روزِ محشر کے اَلم کا دشمنوں کو خوف ہو

دُکھ ہمارا آپ کو کس دن گوارا ہو گیا

 

جو ازل میں تھی وہی طلعت وہی تنویر ہے

آئینہ سے یہ ہوا جلوہ دو بارا ہو گیا

 

تو نے ہی تو مصر میں یوسف کو یوسف کر دیا

تو ہی تو یعقوب کی آنکھوں کا تارا ہو گیا

 

ہم بھکاری کیا ہماری بھیک کس گنتی میں ہے

تیرے دَر سے بادشاہوں کا گزارا ہو گیا

 

اے حسنؔ قربان جاؤں اُس جمالِ پاک پر

سینکڑوں پردوں میں رہ کر عالم آرا ہو گیا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سلام اس پر، کہ نام آتا ہے بعد اللہ کے جس کا
ہر آنکھ میں پیدا ہے چمک اور طرح کی
کیا پیار بھری ہے ذات ان کی جو دل کو جِلانے والے ہیں
نوری محفل پہ چادر تنی نور کی ، نور پھیلا ہوا آج کی رات ہے
کافِ کن کا نقطۂ آغاز بھی تا ابد باقی تری آواز بھی
حامل جلوہءازل، پیکر نور ذات تو
سمایا ہے نگاہوں میں رُخِ انور پیمبر کا
جس کی دربارِ محمد میں رسائی ہوگی
سکونِ قلب و نظر تھا بڑے قرار میں تھے
خیال کیسے بھلا جائے گا جناں کی طرف

اشتہارات