اردوئے معلیٰ

مفہوم سے اونچا ترا عرفان ہے مولا !

معقول سے بالا تری پہچان ہے مولا !

 

یہ اَلسنہ و مجمعِ اَلوان کی تفریق

بے مثلیِٔ تخلیق کی برہان ہے مولا !

 

مصنوع ہے خود حمد گہِ صنعتِ صانع

بے نطق جہاں تیرا ثنا خوان ہے مولا !

 

ہیں آب و ہوا ، آتش و خاک اس میں اکٹھے

شہکار عجب تیرا یہ انسان ہے مولا !

 

تو دودھ بناتا ہے دَم و فَرث کے مابین

کس ذات کی یہ تیرے سوا ، شان ہے مولا !

 

وہ بُعد کہ اَبعد زِ حدِ عرشِ تخیل

وہ قرب کہ اقرب زِ رگِ جان ہے مولا

 

پانی سے تو ہوتی نہیں تطہیرِ بَواطن

یعنی کہ ترا ذکر ہی اشنان ہے مولا !

 

محتاج ستونوں کے نہیں سبعَ سماوات

سائنس تو یہی سوچ کے حیران ہے مولا

 

بنتی ہے کہاں وحدتِ موجود کہے بِن

اَظلالِ عوالم کا جب اعلان ہے مولا !

 

موسم کا تبدل ہے کہاں اور کے بس میں

تقلیبِ شب و روز کب آسان ہے مولا !

 

تو چاہے تو پل بھر میں شہی شاہوں کی جائے

چاہے تو گدا نازشِ سلطان ہے مولا

 

اِک تو ہے شہنشاہ کہ دربار میں جس کے

منگتوں کی امیروں سے بڑی شان ہے مولا !

 

نظّارۂِ شہرِ شہِ ابرار کو کب سے

بے تاب تِرا ساکنِ ملتان ہے مولا !

 

گو اپنی اثیمی پہ پشیماں ہے معظم

پر تیری کریمی پہ اسے مان ہے مولا !

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔