اردوئے معلیٰ

ملی ہزاروں کو اس طرح سے بھی راہِ صواب

نہیں کرم سے ہے خالی تری نگاہِ عتاب

 

برائے مکتبِ دنیا ہے مستقل وہ نصاب

طفیلِ شاہِ مدینہ ملی ہمیں جو کتاب

 

مئے حجاز کی مستی سے ہے غرض مجھ کو

ملے نہ جامِ مصفّٰی تو دُردِ بادۂ ناب

 

پیو پلاؤ مئے عشقِ ساقیِ کوثر

جو حور و خلد کی خواہش تمہیں ہے روزِ حساب

 

ڈھلی ہے شامِ ضعیفی ہیں ختم ہنگامے

نہ اب وہ شوخیِ طفلی نہ جوشِ عہدِ شباب

 

نہ گلستاں میں پھر آئی بہارِ لالۂ و گل

کبھی تو جھوم کے برسے ترے کرم کا سحاب

 

چھپا تھا رازِ غمِ دل نگاہِ محفل سے

ٹپک پڑے مگر آنسو نظرؔ زِچشمِ پُر آب

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات