اردوئے معلیٰ

Search

ملے گا بخشش کا سب کو مژدہ نگاہِ رحمت شفیع ہو گی

چمک اٹھے گا نصیب سب کا پھر ان کی قسمت رفیع ہو گی

 

انہی کے آنے کی برکتیں ہیں جہان بھر میں جو رونقیں ہیں

ازل سے تا بہ ابد جہاں میں انہی کی نعمت وسیع ہو گی

 

شجر حجر ان کے زیرِ فرماں انہی کے بردے ہیں جنّ و انساں

انہی کی اُمّت کثیر ہو گی کہ ساری خلقت مطیع ہوگی

 

مچیں گی ہر سو انہی کی دھومیں ہویدا ہوں گی انہی کی شانیں

ہے نام ان کا محمد احمد کہ حمد حمدِ بدیع ہوگی

 

ملے خدایا اگر سعادت مرے قلم کو بھی ہو اجازت

لکھوں وہ تیرے نبی کی سیرت زمانوں تک جو وقیع ہوگی

 

انہی کی رحمت کا آسرا ہے اُنہی سے ہی عرضِ مدّعا ہے

بدن سے نوری جو جان نکلی تو اس کی منزل بقیع ہو گی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ