ممدوح تُو ہے تا ابد

ممدوح تُو ہے تا ابد

مداح تیرا ہے صمد

 

اے راحتِ قلب و نظر

ہو تم ہی محبوب اَحد

 

تیرے محاسن ان گنت

اوصاف تیرے بے عدد

 

اس لوحِ دل پر نقش ہیں

جانِ جہاں کے خال و خد

 

قربان تجھ پر جان و دل

قربان میرے اب و جد

 

یاربّ نبی کے نور سے

پُر نور ہو کنجِ لحد

 

کر دو عطا اشفاقؔ کو

اپنی غلامی کی سند

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ