اردوئے معلیٰ

Search

مَحبتوں کی مَحبت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

تمام حُسن کی غایت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

مرے قریں بھی مقابل بھی، جاں بھی، بالا بھی

نہایتوں کی نہایت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

خدا بھی، عشق بھی، رازق بھی، پھر محاسب بھی

جمالِ جان بھی، غیرت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

کمالِ خلق بھی، خلقت کا حشر ساماں بھی

عطا بھی، خیر بھی، شفقت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

تمام ہست بھی،سب کچھ بھی بھی، کچھ بھی، یکتا بھی

شعور و ہوش بھی حیرت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

پسِ سجود بھی، مسجود بھی، محافظ بھی

کرم بھی، خوف بھی، الفت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

تجلیات بھی، جبروت بھی، نوازش بھی

جمال و غلبہ و عزت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

جہان تیرا ہے کہ اہلِ جہاں بھی تیرے ہیں

ترا جو ہے تو اضافت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

یہاں بھی، عرش سے بالا بھی، ہمدمِ جاں بھی

ورودِ راحت و نعمت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

سفر کی منزلِ آشوب، راحتِ دل و روح

حضور و حال و سکونت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

دعا بھی، حرفِ دعا بھی، پسِ دعا بھی تو

دعائے دل کی اجابت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

ولی بھی، والی و مولٰی بھی تو، مولّی بھی

ولا بھی، نورِ ولایت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

جہانِ خلق بھی، خالق بھی، خلق پرور بھی

تمام خلق کی حکمت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

تو لفظِ کُن کا محرک بھی، حرفِ مصدر بھی

تو قدر و قادر و قدرت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

فلک فلک کی یہ پنہائیاں یہ ارض و سما

فضا فضا کی یہ وسعت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

یہ شورِ قلزمِ لاہوت، عرش کا غوغا

یہ کبریا کی نزاکت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

تمام حمد بھی، تسبیحِ بے قراراں بھی

زبانِ دل کی سلاست بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

جبیں کا نور، نگہ کا جمال، جاں کی تپش

مراد و ہوشِ ارادت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

طلب کا عالمِ غربت، یہ قربتِ رگِ جاں

طلب کی غربت و قربت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

جمیع حمد، سبھی شکر، جاں فزا اسما

تمام کبر بھی، عظمت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

حرمِ زمین بھی، روحِ مراد بھی تو ہے

مکاں زماں کی عبارت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

خرابہِ شبِ تاریک میں نجومِ سحر

نمودِ صبحِ سعادت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

ہوا و بحر کی موجوں میں تو، سکوت میں تو

ہجومِ ذوقِ اطاعت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

تو لامکاں بھی، تو لحظہ بہ لحظہ دائم بھی

سکوں بھی، دہر بھی، حرکت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

قیامِ شب ہمہ شیریں، رکوعِ شامِ خموش

سجودِ صبح کی وسعت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

خوشی خوشی کے جالے سحر سحر خوشبو

یہ بے قیام سی نکہت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

تبسمِ دلِ کونین، وجدِ روحِ زماں

ہجومِ خیر کی فرصت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

ہوا کا جوش، کرن کا نفوذ، وقت کا شور

سجودِ شوق کی رفعت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

وہ تُو کہ خود ہی اَنَا بھی تُو ہے، ھُو بھی تُو

کثیر تر تری وحدت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

خیال و جذبہ و احساس بھی، یقیں بھی تو

تلاش و دوری و قربت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

وجودِ ہستیِ عالم، فنا میں رنگِ بقا

قیامتوں کی قیامت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

مکاں، زماں، ملکوت، اختیار و حدود

تجھی سے حیرتِ فطرت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

ترے حضور و اطاعت میں دشت و کوہ و فلک

امانتوں کی یہ ہیبت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

تعینات، ورائے تعینات بھی ہے

یہ اپنی آپ شہادت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

یہ تو کہ رنگِ ہمہ رنگ، حالتِ ہمہ حال

یہ بےنشان علامت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

یہ کُن کی حالتِ پائندہ تر بھی تو ہی تو ہے

وہ حشرِ خلق کی ساعت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

قماشِ بدر بھی، احزاب و کربلا تو ہی

متاعِ صبر کی عشرت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

سفر بجانبِ دشتِ فرات، دجلہِ خوں

شہادتوں کی امامت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

یہ تو کہ نامِ مُحَمّد ، تری مَحبت ہے

وہ حُسن و نور، وہ رحمت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

 

میرے کریم بہت بے خبر ہے عرفاؔنی

تو بخش دے! کہ مَحبت بھی تو ہے، سب کچھ تُو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ