اردوئے معلیٰ

Search

مُجھے نِسبت مُحمد مصطفی سے

بڑا تُحفہ مِلا فضلِ خُدا سے

 

گلوں کے لب پہ ہے ذکرِ محمّد

کہا کیا راز شبنم نے صبا سے

 

تصوّر میں مدِینے کی گلی ہے

میں گُم ہوں سوچ میں کُچھ اس ادا سے

 

عطا ہو رُوئے انور کا نظارہ

کہاں تک دل کو دُوں یُونہی دلاسے

 

مدینے کی گلی کوچوں میں گھوموں

جہاں رحمت برستی ہے گھٹا سے

 

پیئیں گے ہم رفیقو ایک دن تو

شرابِ معرفت کے ہم ہیں پیاسے

 

رشیدؔ اندر کے سب در کُھل گئے ہیں

فقط اک خُوشبُوئے صلِِّ علا سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ