مُنہ سے جب نامِ شہنشاہِ رسولاں نکلا

مُنہ سے جب نامِ شہنشاہِ رسولاں نکلا​

خیر مقدم کو دُرودوں کا گلستاں نکلا​​

 

بچھ گئی دولتِ کونین مرے رستے میں

میں جو طیبہ کی طرف بے سرو ساماں نکلا​

 

میں تو سمجھا تھا کہ دشوار ہے ہستی کا سفر​

اُن کی تعلیم سے یہ کام بھی آساں نکلا​

 

​ فکرِ مدحت میں جو پہنچا سرِ گلزارِ سخن ​

ہر گُلِ حرف محمدؐ کا ثنا خواں نکلا​

 

​ خاک ہو کر ہَدفِ موجِ ہَوا بن جاؤں​

درِ آقؐا کی رسائی کا یہ عنواں نکلا​

 

میرے آئینے میں ہے عشقِ محمدؐ کی جِلا​

مجھ سے کترا کے غبارِ غمِ دوراں نکلا​

 

​ منصبِ ذہن پہ فائز ہوئی جب چشمِ خیال​

عشقِ محبوبِ خدا حاصلِ ایماں نکلا​

 

گُلِ توحید کی خوشبو سے مہکتا ہے دماغ​

میں بھی منجملہء خاصانِ گلستاں نکلا​

 

​ بابِ مدحت میں جو تائیدِ خدا چاہی ایاز​

رہنمائی کو ہر اک آیہء قرآں نکلا​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

مدحتِ شاہ سے آغاز ہوا بسم اللہ
مصروفِ حمدِ باری و مدحِ حضورؐ تھا​
غنچہ و گل میں نہ ہرگز مشک اور عنبر میں ہے
یوں ذہن میں جمالِ رسالت سما گیا
عجب پر نور تھا اس دم سماں معراج کی شب
علم محمدؐ ، عدل محمدؐ، پیار محمدؐ
اے کاش! عزیز اِتنی صداقت مجھے مل جائے
کون ہو مسند نشیں خاکِ مدینہ چھوڑ کر
چمک جب تک رہی اعمال میں اُس پاک سیرت کی
اِک میں ہی نہیں اُس پر قربان زمانہ ہے