اردوئے معلیٰ

Search

مِری جبِیں میں یہ عاجزی اِس یقِین پر ہے کہ تُو ہے آقا

نہِیں اُٹھے گا جو تیرے سجدے میں میرا سر ہے کہ تُو ہے آقا

 

ہوا بھی مستی میں جھوم جائے، فضا نئے گیت گا سنائے

تِری ہی توصِیف میں تو اِیمان کی ڈگر ہے کہ تُو ہے آقا

 

زباں کہ لُکنت سے کٹ رہی ہے، جبِیں پسِینے سے تر بتر ہے

مگر خُدایا! نزولِ رحمت پہ بھی نظر ہے کہ تُو ہے آقا

 

ہزار چشمے اُبل پڑیں گے تو دِل کے ارماں نِکل پڑیں گے

کہ میرے جِیون کی جوت تیری ہی آس پر ہے کہ تُو ہے آقا

 

رشید حسرتؔ کے آنسُوؤں میں جھلک ہے کِتنی نِدامتوں کی

مگر عقِیدت کا اُس کے سِینے میں بھی اثر ہے کہ تُو ہے آقا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ