اردوئے معلیٰ

مہک اٹھے سحر سحر ہیں نکہتوں کے سلسلے

نکھر گئے نگر نگر ہیں مدحتوں کے سلسلے

 

یہ کس نگارِ خیر کی ثنائے نور نور ہے

کہ حرف سب قمر قمر ہیں طلعتوں کے سلسلے

 

رہے ہیں رات رات بھریہ کس کے انتظار میں

خیامِ جاں، نظر نظر ہیں رتجگوں کے سلسلے

 

ترے خیال و خواب میں رہا کروں جیا کروں

نشانِ پا ڈگر ڈگر ہیں منزلوں کے سلسلے

 

وہی تو نیک نام ہیں مٹے جو تیرے نام پر

زماں زماں بشر بشر ہیں رفعتوں کے سلسلے

 

ترے ہی ذکرِ نُور کی ہیں برکتیں سمن سمن

چمن چمن شجر شجر ہیں نزہتوں کے سلسلے

 

غلامئ رسول میں نہاں نویدِ فتح ہے

سفر سفر ظفر ظفر ہیں نصرتوں کے سلسلے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔