میانِ قعرِ دریا جس نے اللہ کو پُکارا ہے

میانِ قعرِ دریا جس نے اللہ کو پُکارا ہے

بھنور نے اُس کو فوراً سطحِ دریا پر اُبھارا ہے

کیا طوفاں نے اُس کے واسطے پیدا کنارہ ہے

لبِ ساحل اُسے لایا کرم کا بہتا دھارا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

یارب ہے بخش دینا بندے کو کام تیرا
جو جسم و جاں کے ساتھ ہے شہ رگ کے پاس ہے
تری ذات سب سے عظیم ہے تری شان جل جلالہٗ
اگر جہان میں آتے نہ مصطفیٰؐ اللہ
حوالہ ہے تُو عفو و درگزر کا، کہ تو ستّار بھی غفّار بھی ہے
نہ لب پر شکوہ و فریاد رکھنا
تیری عطائیں بے کنار
خدا مونس، شفیق و مہرباں ہے
کرو مخلوق کی خدمت، یہی خالق کا فرماں ہے
محبت کی صدا ہے اِسمِ اعظم