اردوئے معلیٰ

میرا دامانِ شوق تنگ ، صغیر

تیرے الطاف و عنایات کثیر

 

مصدرِ کائنات اور غذا

چند خرما ہیں صرف نانِ شعیر

 

میں ہوں تشنہ جنم جنم کا شہا

آپ جود و عطا کے ابرِ مطیر

 

تیرے در کے غلام شاہِ جہاں

سطوت و جاہ تیرے در کے فقیر

 

تیرے کھدر پہ ناز کرتے ہیں

ریشم و اطلس و لباسِ حریر

 

تیرا اشفاقؔ ہے بھکاری ترا

تیرے اِکرام ہیں جہاں میں شہیر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ