اردوئے معلیٰ

میرا قلم بہ صفحۂ قرطاس ہے رواں

میرا قلم بہ صفحۂ قرطاس ہے رواں

میں لکھ رہا ہوں مدحتِ سرکارِ دوجہاں

 

اس میں کچھ اختلاف نہیں سب ہیں یک زباں

توصیفِ مجتبیٰ نہ کبھی ہو سکے بیاں

 

اللہ رے شرف کہ ہے وہ قبلۂ جہاں

اللہ کا نبی ہے وہ مخدومِ بندگاں

 

نام اس کا گونجتا ہے فضا میں اذاں اذاں

نقشِ قدم بہ عرشِ معلّیٰ ہے ضو فشاں

 

ان سے ہی جگمگائیں ستاروں کے قمقمے

ان کے ہی دم سے روشنی بزمِ کن فکاں

 

قرآنِ پاک جس کی ہے تنزیل آپ پر

حکمت کے موتیوں کا ہے اک بحرِ بیکراں

 

بے کل رہا وہ شدتِ احساسِ فرض سے

سویا نہ نیند بھر وہ کبھی سرورِ جہاں

 

امت کی مغفرت کے لئے دل میں اک تڑپ

اللہ کے نبی کی وہ شب زندہ داریاں

 

آگے تو سب فسانۂ دجل و فریب ہے

میرے نبی پہ ختم نبوت کی داستاں

 

اتنا ٹھہر کہ دیکھ لوں وہ بارگاہِ میں

لے چل پھر اس کے بعد مجھے مرگِ ناگہاں

 

ساقی سبو بدست کہے کاش حوض پر

کوثر کا جام آئے پیے ہے نظرؔ کہاں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ