اردوئے معلیٰ

Search

میرا وردِ زباں ہے ترا نام بس

میری تسکینِ جاں ہے ترا نام بس

 

زندگی کی کڑکتی ہوئی دھوپ میں

سر پہ سایہ کناں ہے ترا نام بس

 

من کی ویران وادی پہ میری شہا

ہر گھڑی گُلفشاں ہے ترا نام بس

 

رہ سے بھٹکے ہوئے قافلوں کے لئے

منزلوں کا نشاں ہے ترا نام بس

 

رنج و آلام میں اے مرے چارہ گر!

راحتِ جسم و جاں ہے ترا نام بس

 

سارے عالم میں چرچے اسی نام کے

از کراں تا کراں ہے ترا نام بس

 

ہر کوئی اس کی الفت میں سرشار ہے

اس قدر مہرباں ہے ترا نام بس

 

میں جلیل اس سے کہتا ہوں دردِ جگر

بس مرا رازداں ہے ترا نام بس

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ