’’میرے ہر زخمِ جگر سے یہ نکلتی ہے صدا‘‘

 

’’میرے ہر زخمِ جگر سے یہ نکلتی ہے صدا‘‘

تیری اُلفت کی چبھن میں ہے ملی غم کی دوا

اپنا غم دے دے مرے سرورِ خوباں ہم کو

’’اے ملیحِ عَرَبی کر دے نمک داں ہم کو‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

کس کو معلوم ہے سجدے کی حقیقت ہمدم
خدا کا انتخابِ اوّلیں و آخریں آقاؐ
آپؐ نبیوں کے امام اور آپؐ کے ہم سب غلام
خاک پائے شفا، سنگِ در مانگنا
کرم بخشی خدائے مصطفیٰؐ کی
خدا سے مانگ صدقہ مصطفیٰؐ کا
حبیبِ کبریا میرے محمدؐ
’’اے رضاؔ جانِ عنادل ترے نغموں کے نثار‘‘
’’تمہارا نوٗر ہی ساری ہے اُن ساری بہاروں میں ‘‘
’’اُس رضا پر ہو مولا رضائے حق‘‘