اردوئے معلیٰ

Search

میرے ہونٹوں پر ثنا ہے احمدِ مختار کی

ہو گئی چشمِ کرم مجھ پر شہِ ابرار کی

 

نعت کے صدقے ملی ہیں دو جہاں کی نعمتیں

اور تو اوقات کیا تھی میری اوگن ہار کی

 

روشنی سے بھرگئی ہیں زندگی کی ساعتیں

جب سے دیکھی ہے ضیا اس مہبطِ انوار کی

 

شہرِ بطحا کی ہواؤں سے ہوئی ہے دوستی

مشک دے جاتی ہیں مجھ کو گنبد و مینار کی

 

کاش پوری ہو کبھی میرے بھی دل کی آرزو

زندگی میں پھر کبھی ہو حاضری دربار کی

 

دل تڑپتا ہے سنہری جالیوں کو دیکھ لوں

یاد آتی ہے بہت روشن در و دیوار کی

 

جب سے دیکھا ہے مدینہ اور کچھ بھاتا نہیں

پھیکی لگتی ہیں مجھے اب رونقیں سنسار کی

 

گر مقدر رنگ لائے جا بسوں طیبہ نگر

ہر گھڑی کرتی رہوں میں چاکری سرکار کی

 

ناز کے بس میں کہاں توصیف ان کی کر سکوں

آیتوں میں ہے گواہی آپ کے کردار کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ