اردوئے معلیٰ

Search

میم سے آتا ہے نامِ محبوبِ احد

میم درونِ اسمِ محمد اور احمد

 

انگوٹھوں کو پہلے میم پہ چومتا ہوں

جھومتا ہوں جب آتا ہے پھر میم پہ شد

 

میم کی قسمت تو دیکھو کیا خوب ہوئی

میم سے ان کا نام ہے جو ہیں نورِ احد

 

سب حرفوں ،لفظوں کا مرکز میم ہے بس

میم میں ہی پنہاں ہے کُل علم الابجد

 

میم ہی مرکز ہے کارِ مدحت کا اور

نطق کو نورِ میم سے ہی جاری ہے رسد

 

مجھ کو سکھایا بچپن سے ماں باپ نے میم

قبر میں بھی وہ میم کرے گا میری مدد

 

دونوں عالم میم کے دریوزہ گر ہیں

میم کے بحرِ فیض سے ملتا ہے بے حد

 

میم ہی وجہِ تخلیقِ دو عالم ہے

رب نے خود ہی میم کو ٹھہرایا مفرد

 

میم کے فیضِ نور سے منظر روشن ہے

شعر و سخن میں میم کو رکھتا ہے سرحد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ