اردوئے معلیٰ

Search

میں اپنی زندگی اس شان سے تحریر کرتا ہوں

کہ یوں لگتا ہے جیسے حسن کی تفسیر کرتا ہوں

 

کسی کی بھی کبھی تقلید بھولے سے نہیں کرتا

جو کچھ دل پر گزرتا ہے وہی تحریر کرتا ہوں

 

پریشاں میں رہوں دنیا پریشانی سے بچ جائے

ٹھہر اے گردشِ دوراں تجھے زنجیر کرتا ہوں

 

مری تقدیر کے لکھے پہ دنیا خندہ زن کیوں ہے

کسی سے کیا کبھی میں شکوۂ تقدیر کرتا ہوں

 

مجھے دیتی رہی ہے آج تک جس کی سزا دنیا

خدا جانے میں ایسی کون سی تقصیر کرتا ہوں

 

زمانے کی نگاہوں میں مرا یہ جرم ہے ساقیؔ

میں اپنے عہد کے حالات کی تفسیر کرتا ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ