اردو معلی copy
(ہمارا نصب العین ، ادب اثاثہ کا تحفظ)

میں تھک گیا ہوں اجالوں میں ڈھونڈ کر اُس کو

میں تھک گیا ہوں اجالوں میں ڈھونڈ کر اُس کو

اُسے کہو کہ مقدر میں کوئی شام لکھے

 

تمہارے بعد محبت نے حوصلہ تو دیا

یہ آسرا ہے مگر آسرا ہے تھوڑا سا

 

اُسے خبر ہی نہیں ہے عقیدتوں کے چراغ

کہاں جلائے کہاں پر بجھائے جاتے ہیں

 

کبھی جلائے مری شاعری بھرے اوراق

کبھی وہ وصل کے پیغام میرے نام لکھے

 

کسی کسی سے مری بات کی ہواؤں نے

کسی کسی نے مرا اعتبار بھی نہ کیا

 

یہ تیری آنکھ میں کس واسطے نمی پھیلی

مجھے خبر تھی جدائی بھی راس آئے گی

 

فلک کی سرخیاں مجھ کو بتا رہی ہیں کہ وہ

کچھ ایسے رو کے نگاہوں کو لال کرتا ہے

 

اُسے یہ کس نے سکھائے فنون حیرت کے

وہ اپنے بارے میں مجھ سے سوال کرتا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں نے کہا کہ دل سے اُتر سی گئی ہو تم
مشت برابر جیون اندر،جنم جنم کے روگ
!آبرودار دربدر، سائیں
’’ بول پیا‘‘
اک بہانہ تھا شام سے پہلے
ضبط کرنے والے بھی
میرے دل سے جدا نہیں ہے نا
آج دل کو بے قراری اور ہے
کون کہتا ہے اس کو پورا خط
مجھے موت دے، نہ حیات دے