اردوئے معلیٰ

 

میں سر پہ سجائے پھروں نعلینِ محمد

آنکھوں سے لگائے پھروں نعلینِ محمد

 

انساں ہوں فرشتے ہوں سبھی کوہی طلب ہے

ہراک سے چھپائے پھروں نعلینِ محمد

 

ہے انجمنِ دل میں قیامت کا چراغاں

میں دل میں بسائے پھروں نعلینِ محمد

 

مس ان سے ہوئی خاک، مری آنکھ کا سرمہ

آنکھوں میں سمائے پھروں نعلینِ محمد

 

مس ان سے ہؤے ہیں شہِ کونین کے تلوے

تاج اپنا بنائے پھروں نعلینِ محمد

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات