میں سیہ کار خطا کار کہاں

میں سیہ کار خطا کار کہاں

بزمِ کونین کے سردارؐ کہاں

 

خواہشِ دیدِ نبیؐ ہے دل میں

ورنہ بندوں سے مجھے پیار کہاں

 

دونوں عالم نے گواہی دی ہے

آپؐ سا صاحبِ کردار کہاں

 

حسنِ یوسفؑ بھی بجا ہے لیکن

آپؐ سا رُوئے ضیا بار کہاں

 

آپؐ نے بھانپ لیا حالِ زبوں

مجھ میں تھی جرأتِ اظہار کہاں

 

میری تخلیق میں ہے خاکِ عجم

شاہِ کونینؐ کا دربار کہاں

 

یہ تو ہے اُنؐ کی عنایت اشفاقؔ

میں کہاں؟ سیدِ ابرارؐ کہاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ضیائے سدرہ و طوبیٰ و کل جہاں روشن
جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​
زمیں سے تا بہ فلک ایسا رہنما نہ ملا
مہر ھدی ہے چہرہ گلگوں حضورؐ کا
ہوئے جو مستنیر اس نقشِ پا سے
حَیَّ علٰی خَیر العَمَل
بس قتیلِ لذتِ گفتار ہیں
تجھے مِل گئی اِک خدائی حلیمہ
قائم ہو جب بھی بزم حساب و کتاب کی
نہیں شعر و سخن میں گو مجھے دعوائے مشاقی

اشتہارات